The news is by your side.

Advertisement

شمالی کوریا تنازعہ، امریکا بغیر کسی شرط کے مذاکرات کے لیے راضی

واشنگٹن: شمالی کوریا سے کشیدگی کے خاتمے کے لیے امریکا بغیر کسی شرط کے ایک بار پھر مذاکرات کے لیے راضی ہوگیا۔

تفصیلات کے مطابق اس سے قبل امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ شمالی کوریا کے سربراہ کم جونگ ان سے مذاکرات کے لیے حامی بھر چکے ہیں، البتہ شمالی کوریا نے انکار کردیا تھا۔

غیر ملکی خبر رساں ادارے کے مطابق کم جونگ ان نے موقف اختیار کیا ہے کہ مذاکرات کے لیے امریکا کو اپنی پابندیاں ختم کرنی ہوگی۔

البتہ امریکی حکام کا کہنا ہے کہ شمالی کوریا کے ساتھ مذاکرات کی بحالی کے لیے کوئی شرائط نہیں ہیں تاہم ساتھ ہی اس بات پر بھی زور دیا ہے کہ پیونگ یانگ کو جوہری صلاحیت کے خاتمے کے لیے زیادہ اقدامات کرنے چاہییں۔

دریں اثنا امریکی صدر کو شمالی کوریا کے رہنما کِم جونگ اُن کی طرف سے ایک نیا ’خوبصورت خط‘ بھی موصول ہوا ہے، جس میں مثبت خیالات کا اظہار اور جوہری پروگرام کے خاتمے کی بات کی گئی ہے۔

امریکا کے خصوصی مندوب اسٹیفن بیگن کا کہنا تھا کہ شمالی کوریا نے گرم جوشی پر مبنی تعلقات کے لیے اپنا جوہری پروگرام ترک کرنے کی پیشکش کی ہے، تاہم با معنی مذاکرات کے لیے قابل تصدیق اقدامات ضروری ہیں۔

ٹرمپ،کم جونگ ان مذاکرات کی ناکامی :شمالی کوریا کے 5عہدیداروں کو موت کی سزا

یاد رہے ٹرمپ اورکم جونگ ان کی ملاقات فروری میں ویتنام میں ہوئی تھی جوبے نتیجہ رہی تھی، کم جونگ ان نے مذاکرات کی ناکامی کہ وجہ ’’امریکا کی بدنیتی’’ قرار دیتے ہوئے کہا تھا صدر ٹرمپ نے ملاقات کے دوران بدنیتی کا مظاہرہ کیا۔

واضح رہے کہ کم جونگ کے حکم پر اس سے قبل بھی کئی اہم حکومتی عہدیداروں کو مختلف الزامات کے تحت سزائے موت دی جا چکی ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں