قطری خط کو درست مان لیا تو آئندہ کے لیے یہ جواز بن جائے گا، اعتزاز احسن
The news is by your side.

Advertisement

قطری خط کو درست مان لیا تو آئندہ کے لیے یہ جواز بن جائے گا، اعتزاز احسن

لاہور : سینیٹ میں قائد حزب اختلاف چودھری اعتزاز احسن نے کہا ہے کہ کاروباری لین دین بینکوں کے ذریعے ہوتا ہے مگر میاں شریف نے جو اربوں روپے کا کاروبار کیا ہے اس کی منی ٹریل کا پتہ نہیں چل رہا جس سے لگتا ہے کہ شریف فیملی بوریوں میں کیش ڈال کر گدھوں کے ذریعے باہر بھجواتے رہے ہیں۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے گزشتہ روز لاہور ہائیکورٹ میں میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ان کا کہنا تھا کہ نوازشریف عرصہ دراز سے کاروبار کر رہے ہیں اور اربوں روپوں میں کاروبار کیا ہے لیکن ان کے پاس منی ٹریل نہیں جو کہ حیران کن بات ہے۔

انہوں نے قطری خط پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ پاناما لیکس کیس میں حکومت خط پر خط پیش کر رہی ہے اگر آج قطری خطوط کو درست تسلیم کر لیا گیا تو ہر کالا دھن سفید ہو جائے گا اور آئندہ کے لیے یہ قطری خطوط ہر منی لانڈرنگ کرنے والوں کو بچانے کا راستہ اور جواز بن جائے گا۔

چوہدری اعتزاز احسن نے کہا کہ قطری خط صرف شریف فیملی کو نہیں بلکہ آئندہ ہر منی لانڈرنگ کرنے والوں کو بھی بچائے گا اور جب تک شریف فیملی کے ایک ایک فرد کے بنک اکاﺅنٹ کی چھان بین نہیں ہوگی اس وقت تک منی ٹریل کا پتہ لگانا ناممکن ہے،قطری خط کے بعد پچاس کروڑ دے کر کالے دھن کو اب ہر کوئی سفید کرے گا۔

انہوں نے کہا کہ انتہائی مضحکہ خیز بات یہ ہے کہ پورا خاندان ایک دوسرے کو اربوں روپے کے گفٹ دے رہا ہے ایسا تو پوری دنیا میں کہیں نہیں ہوتا جو سوال پوچھا جائے یاتو جواب میں قطری خط آجاتا ہے یا پھر پورے اہلِ خانہ کا ایک دوسرے کو تحفے دینے کا سلسلہ شروع ہوجاتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہمیں عدلیہ پر پورا اعتماد ہے اور توقع کرتے ہیں کہ عدالت میرٹ کے مطابق فیصلہ کرے گی اور ایسا فیصلہ نہیں دے گی جس سے ملک میں انارکی پھیلنے کا خدشہ ہو ۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں