The news is by your side.

Advertisement

سابق وزیر اعظم کے بیٹے علی حیدر گیلانی ملتان پہنچ گئے

ملتان : علی حیدر گیلانی لاہور سے اپنے آبائی شہر ملتان پہنچ گئے،جہاں ان کا والہانہ استقبال کیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق افغانستان سے رہائی پانے والے سابق وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی کے بیٹے علی حیدر گیلانی لاہور سے اپنے آبائی شہر ملتان پہنچ گئے، اس موقع پر ان کا والہانہ استقبال کیا گیا۔

علی حیدر گیلانی نے گھر کے باہر میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ ’’ آج میں آپ لوگوں کے درمیان موجود ہوں یہ آپ لوگوں کی دعاؤں کا نتیجہ ہے کہ تین سالوں میں اللہ تعالی نے بہت صبر عطاء فرمایا ورنہ جہاں سے میں آیا ہوں وہاں زندہ رہنے سے زیادہ مرنا آسان ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ آج میں آپ کے سامنے زندہ کھڑا ہوں یہ غلام محیٰ الدین کے  لہو کا صدقہ ہے، اُس نے میرے خاطر جان کا نظرانہ پیش کیا اُسے خراجِ تحسین پیش کرتا ہوں۔

علی حیدر گیلانی نے کہا کہ جن لوگوں نے میری رہائی کے لئے دعا کی ان کا تہہ دل سے مشکور ہوں، میری رہائی پاکستانی ایجنسیز اور افغان حکام کی مشترکہ کاوش کا نتیجہ ہے، جس کے لئے میں اُن کا بھی شُکر گزار ہوں۔

انہوں نے پاکستان کا امن خراب کرنے والوں کو مخاطب کرتے ہوئے کہا کہ ’’ ظلم پھر ظلم ہے بڑھتا ہے تو مٹ جاتا ہے، میں یوسف رضا گیلانی کا بیٹا ہوں اپنے والد کی طرح کبھی جھکانا نہیں سیکھا۔

مزید پڑھیں : لاہور: 3 سال کیسے گزرے، طویل کہانی ہے، علی حیدر گیلانی

 اس موقع پر سابق وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی نے کہا کہ ’’ کچھ لوگ کہتے ہیں کہ علی حیدر گیلانی کو میں نے خود چھپایا ہوا تھا۔‘‘

سابق وزیر اعظم نے مزید کہا کہ آج اہلیانِ ملتان کے لئے بہت بڑا دن ہے، بیٹے کی رہائی کے لئے تمام متعلقہ اداروں کے افراد کا شکریہ ادا کرتا ہوں۔

موجودہ سیاسی صورتحال پر بات کرتے ہوئے سابق وزیر اعظم نے کہا کہ’’ خوشی ہے کہ ہماری جمہوری روایات کو آگے بڑھایا جارہا ہے اور تمام معاملات کو آئینی طور پر اپوزیشن میں حل کیا جارہا ہے۔

پاکستان پیپلزپارٹی کرپشن کے خلاف اداروں سے تعاون جاری رکھے گی ، ہم پارلیمنٹ کی بالادستی چاہتے ہیں تا کہ ملک میں حقیقی جمہوریت کا نفاذ یقینی ہو۔

علی حیدر گیلانی کی لاہور آمد کے موقع پر اسلام آباد میں پیشی پر موجود تھا اور کل ایک کیس کے سلسلے میں کراچی جانا ہے، عدالتوں کے اوپر مکمل اعتماد ہے اور امید ہے کہ انصاف پر مبنی فیصلے کیے جائیں گے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں