The news is by your side.

Advertisement

مغرب کے بعد سے فجر تک صورتحال تبدیل ہوئی، علی رضا عابدی

کراچی: ایم کیو ایم پاکستان کے امیدوار اور تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان کے حریف علی رضا عابدی نے کہا ہے کہ میرے 864 پولنگ ایجنٹس نے پوچھا مجھے کیوں نکالا؟ مغرب کے بعد سے فجر تک صورتحال تبدیل ہوئی۔

اے آر وائی کی خصوصی الیکشن ٹرانسمیشن میں گفتگو کرتے ہوئے علی رضا عابدی کا کہنا تھا کہ کراچی میں تحریک انصاف کی کامیابی پر سب کو حیرت ہوئی۔

ایم کیو ایم کے امیدوار کا کہنا تھا کہ آرٹی ایس سسٹم آراو اور الیکشن کمیشن میں رابطے کے لیے تھا، پولنگ ایجنٹس کو اسٹیشنز سے نکال دیا گیا، یہ شکایت صرف میری نہیں بلکہ دیگر جماعتوں کے امیدوران نے بھی کی۔

علی رضا عابدی کا کہنا تھا کہ الیکشن کمیشن کی جانب سے سادے پرچے پرنتیجہ لکھ کردےدیا گیا اور کہا گیا کہ فارم بعدمیں ملےگا، صرف ایک جماعت ایجنٹس کو اندر بیٹھنے کی اجازت دی گئی۔

ووٹر کی تقسیم کے حوالے سے متحدہ پاکستان امیدوار کا کہنا تھا کہ اگر ایم کیو ایم کا ووٹر تقسیم تھا تو پاک سرزمین پارٹی کو ووٹ بھی ملنا چاہیے تھا مگر ایسا دیکھنے میں نہیں آیا، الیکشن کمیشن میں ممکنہ دھاندلی اور نتائج تبدیل کرنے کے خلاف درخواست دائر کردی۔

خیال رہے کہ علی رضا عابدی قومی اسمبلی کے حلقے این اے 243 سے تحریک انصاف کے مدمقابل تھے جنہیں عمران خان نے بڑے ووٹوں کے شکست دی۔

واضح رہے کہ ایم کیو ایم سمیت دیگر جماعتوں نے الزام عائد کیا ہے کہ اُن کے پولنگ ایجنٹس کو اسٹیشنز سے باہر نکال کر نتائج تبدیل کیے گئے جبکہ الیکشن کمیشن کے ترجمان نے الزامات کو مسترد کردیا۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات  کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں