site
stats
اے آر وائی خصوصی

عظیم خطیب اورعالم دین علامہ رشید ترابیؒ کی 43 ویں برسی

اردو زبان، عربی یا فرانسیسی کی مانند بلا شبہ خطابت کے لئے از حد زرخیز ہے، چنانچہ اس زبان نے بے شمار اعلی پائے کے خطیب متعارف کئے ہیں، ان میں شورش کاشمیری اورعطا اللہ شاہ بخاری جیسے نابغہ روزگار خطیب بھی شامل ہیں، علامہ رشید ترابی کی داستان بھی نہ صرف فصاحت و بلاغت کی داستان ہے بلکہ ایک غیر معمولی حافظے کی داستان بھی ہے، آج ان ہی عظیم خطیب کا یوم وفات ہے۔

ﻋﺎﻟﻢ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﮯ ﻋﻈﯿﻢ ﺧﻄﯿﺐ، ﻋﺎﻟﻢ ﺩﯾﻦ ﺍﻭﺭ ﺷﺎﻋﺮﻋﻼﻣﮧ ﺭﺷﯿﺪ ﺗﺮﺍﺑﯽ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ ﭘﯿﺪﺍﺋﺶ نو ﺟﻮﻻﺋﯽ 1908ﺀ ﮨﮯ۔ ﻋﻼﻣﮧ ﺭﺷﯿﺪ ﺗﺮﺍﺑﯽ ﮐﺎ ﺍﺻﻞ ﻧﺎﻡ ﺭﺿﺎ ﺣﺴﯿﻦ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﻭﮦ ﺣﯿﺪﺭﺁﺑﺎﺩ ﺩﮐﻦ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺪﺍ ﮨﻮﺋﮯ ﺗﮭﮯ۔ آپ کے والد مولوی شرف الدین ایک اعلی سرکاری عہدے پھر فائز تھے۔

آپ کے بھائی مظہرعلی خان پشاور یونیورسٹی کے وائس چانسلر رہے جبکہ دیگر تین بھائی بھی قابلیت کے مدارج پر فائز رہے، علامہ صاحب وہ پہلے ذاکر تھے جنہوں نے سولہ سال کی عمر میں عنوان مقرر کر کے تقریر کرنے کی بنیاد ڈالی۔

turrabi-post-01

ﻋﻼﻣﮧ ﺭﺷﯿﺪ ﺗﺮﺍﺑﯽ ﻧﮯ ﺍﺑﺘﺪﺍﺋﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﻋﻼﻣﮧ ﺳﯿﺪ ﻋﻠﯽ ﺷﻮﺳﺘﺮﯼ، ﺁﻏﺎ ﻣﺤﻤﺪ ﻣﺤﺴﻦ ﺷﯿﺮﺍﺯﯼ، ﺁﻏﺎ ﺳﯿﺪ ﺣﺴﻦ ﺍﺻﻔﮩﺎﻧﯽ ﺍﻭﺭﻋﻼﻣﮧ ﺍﺑﻮﺑﮑﺮ ﺷﮩﺎﺏ ﻋﺮﯾﻀﯽ ﺳﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ، ﺷﺎﻋﺮﯼ ﻣﯿﮟ ﻧﻈﻢ ﻃﺒﺎﻃﺒﺎﺋﯽ ﺍﻭﺭ ﻋﻼﻣﮧ ﺿﺎﻣﻦ ﮐﻨﺘﻮﺭﯼ ﮐﮯ ﺷﺎﮔﺮﺩ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﺫﺍﮐﺮﯼ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﻋﻼﻣﮧ ﺳﯿﺪ ﺳﺒﻂ ﺣﺴﻦ ﺻﺎﺣﺐ ﻗﺒﻠﮧ ﺳﮯ ﺍﻭﺭ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﮐﯽ ﺗﻌﻠﯿﻢ ﺧﻠﯿﻔﮧ ﻋﺒﺪﺍﻟﺤﮑﯿﻢ ﺳﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ۔

ﻋﺜﻤﺎﻧﯿﮧ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﺳﮯ ﺑﯽ ﺍﮮ ﺍﻭﺭ ﺍﻟٰﮧ ﺁﺑﺎﺩ ﯾﻮﻧﯿﻮﺭﺳﭩﯽ ﺳﮯ ﻓﻠﺴﻔﮧ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﻢ ﺍﮮ ﮐﯿﺎ۔ ﻋﻼﻣﮧ ﺭﺷﯿﺪ ﺗﺮﺍﺑﯽ ﻧﮯ 10 ﺑﺮﺱ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﭘﻨﮯ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻣﻤﺘﺎﺯ ﺫﺍﮐﺮ ﻣﻮﻻﻧﺎ ﺳﯿﺪ ﻏﻼﻡ ﺣﺴﯿﻦ ﺻﺪﺭ ﺍﻟﻌﻠﻤﺎﺀ ﮐﯽ ﻣﺠﺎﻟﺲ ﻣﯿﮟ ﭘﯿﺶ ﺧﻮﺍﻧﯽ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﺮﺩﯼ ﺗﮭﯽ۔ ﺳﻮﻟﮧ ﺑﺮﺱ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻋﻨﻮﺍﻥ ﻣﻘﺮﺭ ﮐﺮﮐﮯ ﺗﻘﺎﺭﯾﺮ ﮐﺮﻧﺎ ﺷﺮﻭﻉ ﮐﯿﮟ۔

turrabi-post-02

ﺗﻘﺎﺭﯾﺮ ﮐﺎ ﯾﮧ ﺳﻠﺴﻠﮧ ﻋﺎﻟﻢ ﺍﺳﻼﻡ ﻣﯿﮟ ﻧﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺟﺪﯾﺪ ﺧﻄﺎﺑﺖ ﮐﺎ ﻣﻮﺟﺪ ﮐﮩﺎ ﺟﺎﻧﮯ ﻟﮕﺎ۔ 1942ﺀ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺁﮔﺮﮦ ﻣﯿﮟ ﺷﮩﯿﺪ ﺛﺎﻟﺚ ﮐﮯ ﻣﺰﺍﺭ ﭘﺮ ﺟﻮ ﺗﻘﺎﺭﯾﺮ ﮐﯿﮟ ﻭﮦ ﺍﻥ ﮐﯽ ﮨﻨﺪﻭﺳﺘﺎﻥ ﮔﯿﺮ ﺷﮩﺮﺕ ﮐﺎ ﺑﺎﻋﺚ ﺑﻨﯿﮟ۔

ﻋﻼﻣﮧ ﺭﺷﯿﺪ ﺗﺮﺍﺑﯽ ﺍﺱ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﻋﻤﻠﯽ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﻣﻨﺴﻠﮏ ﺭﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﻗﺎﺋﺪ ﻣﻠﺖ ﻧﻮﺍﺏ ﺑﮩﺎﺩﺭ ﯾﺎﺭ ﺟﻨﮓ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﻣﺠﻠﺲ ﺍﺗﺤﺎﺩ ﺍﻟﻤﺴﻠﻤﯿﻦ ﮐﮯ ﭘﻠﯿﭧ ﻓﺎﺭﻡ ﭘﺮﻓﻌﺎﻝ ﺭﮨﮯ۔ ﻗﺎﺋﺪ ﺍﻋﻈﻢ ﮐﯽ ﮨﺪﺍﯾﺖ ﭘﺮﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﺴﻠﻢ ﻟﯿﮓ ﻣﯿﮟ ﺷﻤﻮﻟﯿﺖ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ انیس سو چالیس ﻣﯿﮟ ﺣﯿﺪﺭﺁﺑﺎﺩ ‏( ﺩﮐﻦ‏) ﮐﯽ ﻣﺠﻠﺲ ﻗﺎﻧﻮﻥ ﺳﺎﺯ ﮐﮯ ﺭﮐﻦ ﺑﮭﯽ ﻣﻨﺘﺨﺐ ﮨﻮﺋﮯ۔

سنہ انیس سو اننچاس ﻣﯿﮟ ﻋﻼﻣﮧ ﺭﺷﯿﺪ ﺗﺮﺍﺑﯽ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﺁﮔﺌﮯ، ﯾﮩﺎﮞ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﻋﻤﻠﯽ ﺳﯿﺎﺳﺖ ﺳﮯ ﮐﻨﺎﺭﮦ ﮐﺸﯽ ﺍﺧﺘﯿﺎﺭ ﮐﺮﮐﮯ ﺧﻮﺩ ﮐﻮ ﺫﮐﺮِ ﺣﺴﯿﻦ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﻭﻗﻒ ﮐﺮﺩﯾﺎ۔

ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ 1951ﺀ ﺳﮯ 1953ﺀ ﺗﮏ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﺳﮯ ﺭﻭﺯﻧﺎﻣﮧ ﺍﻟﻤﻨﺘﻈﺮ ﮐﺎ ﺍﺟﺮﺍء ﮐﯿﺎ۔ ﺍﺱ ﺳﮯ ﻗﺒﻞ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺣﯿﺪﺭﺁﺑﺎﺩ ﺩﮐﻦ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ ﺍﯾﮏ ﮨﻔﺖ ﺭﻭﺯﮦ ﺍﻧﯿﺲ ﺟﺎﺭﯼ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ 1957ﺀ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﺴﺎﻋﯽ ﺳﮯ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﻣﯿﮟ 1400 ﺳﺎﻟﮧ ﺟﺸﻦ ﻣﺮﺗﻀﻮﯼ ﺑﮭﯽ ﻣﻨﻌﻘﺪ ﮨﻮﺍ۔

ﻋﻼﻣﮧ ﺭﺷﯿﺪ ﺗﺮﺍﺑﯽ ﺍﯾﮏ ﻗﺎﺩﺭ ﺍﻟﮑﻼﻡ ﺷﺎﻋﺮ ﺑﮭﯽ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﻥ ﮐﮯ ﮐﻼﻡ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﻣﺠﻤﻮﻋﮧ ’’ ﺷﺎﺥ ﻣﺮﺟﺎﻥ ‘‘ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺍﺷﺎﻋﺖ ﭘﺰﯾﺮ ﮨﻮﭼﮑﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻋﻼﻭﮦ ﺍﻥ ﮐﯽ ﻣﺮﺗﺐ ﮐﺮﺩﮦ ﮐﺘﺎﺑﯿﮟ ﻃﺐ ﻣﻌﺼﻮﻣﯿﻦ ‘ ﺣﯿﺪﺭﺁﺑﺎﺩ ﮐﮯ ﺟﻨﮕﻼﺕ ﺍﻭﺭ ﺩﺳﺘﻮﺭ ﻋﻠﻤﯽ ﻭ ﺍﺧﻼﻗﯽ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﺑﮭﯽ ﺷﺎﺋﻊ ﮨﻮﭼﮑﯽ ﮨﯿﮟ۔

ﻋﻼﻣﮧ ﺭﺷﯿﺪ ﺗﺮﺍﺑﯽ 18 ﺩﺳﻤﺒﺮ 1973ﺀ ﮐﻮ ﮐﺮﺍﭼﯽ ﻣﯿﮟ ﻭﻓﺎﺕ ﭘﺎﮔﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺣﺴﯿﻨﯿﮧ ﺳﺠﺎﺩﯾﮧ ﮐﮯ ﺍﺣﺎﻃﮯﻣﯿﮟ ﺁﺳﻮﺩﮦٔ ﺧﺎﮎ ﮨﻮئے۔ آج ان کو ہم سے رخصت ہوئے تینتالیس برس گزر گئے، اور یہ ذکر حسین کا ہی فیض ہے کہ ان کی یاد کا اجالا اس دن ختم ہوگا جس دن آخری سورج غروب ہوگا۔

ہے تیرے ذکر کی عطا ذکر رشید ہے یہاں
سب کو میں یاد رہ گیا صدقے تیری یاد کے

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top