The news is by your side.

Advertisement

الطاف حسین کا مطالبہ ناقابل برداشت اور غیر آئینی ہے، سید قائم علی شاہ

کراچی : وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ نے الطاف حسین کی جانب سے ناٹو اور اقوام متحدہ کی فورسز کو کراچی میں بلانے کے مطالبے کو ناقابل برداشت ،غیر ضروری اور غیر آئینی قرار دیا ہے۔

وزیراعلیٰ ہاؤس سے جاری بیان میں وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ نے کہا کہ کراچی میں قیام امن کیلئے پولیس اور رینجرز کی قربانیاں ناقابل فراموش ہیں۔

انہوں نے کہا کہ تمام سیاسی پارٹیوں نے ملک بھر سے بالخصوص کراچی شہر سے دہشت گردوں، اور جرائم پیشہ عناصر کے خاتمے کیلئے سول اور فوجی قیادت کی موجودگی میں متفقہ طور پر آمادگی ظاہر کی تھی اور جب شہر میں امن کا قیام ہو چکا ہے تو اب ناٹو اور اقوام متحدہ سے فورسز بھیجنے کا مطالبہ غیر آئینی ہے۔

انہوں نے کہا کہ یہ مطالبہ شہر کے لوگوں،قانون نافذ کرنے اداروں اور عوام کے ساتھ کئے گئے کمٹ منٹ کے ساتھ ناانصافی ہے۔

انہوں نے کہا کہ سول اور فوجی قیادت کی مشترکہ جدوجہدکے صلے میں کراچی میں امن کا قیام ممکن ہوا،قانون نافذ کرنے والے اداروں غیر معمولی اقدامات کرکے کراچی میں امن بحال کروایا۔

وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ سندھ میں رہنے والے مہاجر،اردو بولنے والے سندھی ہیں اور انکا نام لیکے کسی دوسرے ملک کو دعوت دینے کا بہانا نہیں چلے گا اور پاکستان کے اندرونی معاملات میں عمل دخل کرنے کا کسی بھی دوسرے ملک کو کوئی حق نہیں ہے۔

وزیراعلیٰ سندھ سید قائم علی شاہ نے دوٹوک الفاظ میں کہا کہ کراچی میں جاری ٹارگیٹیڈ آپریشن کسی بھی مخصوص سیاسی پارٹی ، گروپ یا لیڈر کے خلاف نہیں بلکہ یہ صرف اور صرف دہشتگردوں،جرائم پیشہ اور سماج دشمن عناصر کے خلاف ہے۔

انہوں نے کہا کہ سندھ پولیس، رینجرز، ایجنسیوں کی مشترکہ کاوشوں اور پاکستان آرمی کی حمایت سے ہم نے جرائم پر مکمل کنٹرول کرلیا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ کوئی پاگل شخص ہی کسی بیرونی ملک باالخصوص بھارت کو مداخلت کی دعوت دینے کا سوچ سکتا ہے۔انہوں نے کہا کہ ٹارگیٹیڈ آپریشن کو متنازع بنانے کی کسی بھی کوشش کو ہم برداشت نہیں کریں گے اور اس قسم کا مطالبہ ملک کی خودمختیاری کے خلاف ہے۔

واضع رہے کہ الطاف حسین نے لندن سے ٹیکساس کے ایک مجمعے سے خطاب کرتے ہوئے ناٹو اور اقوام متحدہ کی فورسز کو کراچی میں بلانے کا مطالبہ کیا تھا اور انڈیا کو کراچی میں مہاجروں کے قتل کے خلاف ایکشن نہ لینے پر بزدل قرار دیا تھا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں