The news is by your side.

Advertisement

امل عمر بل، شکر ہے ہماری بیٹی کی قربانی رائیگاں نہیں گئی: والدہ

کراچی: صوبہ سندھ کے دارالحکومت کراچی میں مبینہ پولیس مقابلے میں جاں بحق ہونے والی 10 سالہ امل کی والدہ کا کہنا ہے کہ اگر ہماری بچی کی قربانی سے بہتری آنی ہے تو یہی ہمارے لیے تسلی بخش ہے۔

تفصیلات کے مطابق سندھ اسمبلی میں امل عمر کے نام سے منسوب بل پیش کیے جانے کے بعد امل کے والدین نے سندھ حکومت کے مشیر اطلاعات مرتضیٰ وہاب کے ہمراہ میڈیا سے گفتگو کی۔

امل کی والدہ کا کہنا تھا کہ جو واقعہ پیش آیا اس کی ذمہ داری سندھ حکومت کی ہی بنتی ہے لیکن اگر حکومت اپنی غلطی تسلیم کر رہی ہے اور اسے بہتر کرنا چاہ رہی ہے تو ہم اس کے حق میں ہیں۔

انہوں نے کہا واقعے کے بعد سندھ حکومت کے رویے پر ہم ان کے شکر گزار ہیں۔

امل کی والدہ کا کہنا تھا کہ اگر ہماری بچی کی قربانی سے بہتری کا آغاز ہونے جارہا ہے تو ہمارے لیے یہ تسلی بخش بات ہے۔

اس سے قبل سندھ اسمبلی میں زخمیوں کے علاج سے متعلق ایکٹ کا مسودہ پیش کیا گیا۔ مجوزہ قانون میں کہا گیا ہے کہ تمام نجی و سرکاری اسپتالوں کے لیے زخمی کا فوری علاج لازم ہوگا، کوئی نجی یا سرکاری اسپتال زخمی کے علاج سے انکار نہیں کر سکے گا۔

مسودے کے مطابق کوئی ڈاکٹر یا اسپتال زخمی کے علاج کے لیے میڈیکل لیگل کا تقاضہ نہیں کرے گا۔

وزیر اعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ کا کہنا تھا کہ فائرنگ سے جاں بحق ہونے والی بچی کو واپس نہیں لاسکتے مگر بل کو اس کا نام دے رہے ہیں۔

خیال رہے کہ 13 اگست کی شب کراچی میں ڈیفنس موڑ کے قریب اختر کالونی سگنل پر ایک مبینہ پولیس مقابلے ہوا تھا، مذکورہ مقابلے میں ایک مبینہ ملزم کے ساتھ ساتھ 10 سالہ امل بھی جاں بحق ہوگئی تھی جو جائے وقوع پر موجود گاڑی کی پچھلی نشست پر بیٹھی تھی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں