The news is by your side.

Advertisement

آرمی چیف سے امریکی ناظم الامور کی الوداعی ملاقات

راولپنڈی: آرمی چیف جنرل قمرجاوید باجوہ سے امریکی ناظم الامور پال جونز کی الوداعی ملاقات ہوئی جس میں آرمی چیف نےپاکستان کےلیےامریکی سفارتکار کی خدمات کو سراہا۔

پاک فوج شعبہ تعلقات عامہ آئی ایس پی آر کے مطابق امریکی ناظم الامورپال جونز نے جی ایچ کیو کا دورہ کیا اور آرمی چیف سے ملاقات کی۔

الوداعی ملاقات میں آرمی چیف نے پاکستان کےلیےامریکی سفارتکار کی خدمات کو سراہا، امریکی ناظم الامور پال جونز نے افغان مفاہمتی عمل میں پاکستان کےمثبت کردار کی تعریف کی۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان کےتعاون سےخطےمیں امن و استحکام کو فروغ ملےگا۔

یہ بھی پڑھیں: پال جونز نے امریکی سفارت خانے میں بطور قائم مقام سفیر ذمہ داریاں سنبھال لیں

پال جونز نے 24 ستمبر 2018 کو ناظم الامور کی زمہ دارایاں سنبھالیں تھیں۔جونز نے پاکستان پہنچنے کے بعد اظہار خیال کرتے ہوئے کہا تھا کہ اُنہیں پاکستان واپس آ کر بے انتہا خوشی ہوئی ہے اور وہ خود کو ملک کے گرم جوش اور مہمان نواز لوگوں، خوبصورت نظاروں اور لذیذ کھانوں سے دوبارہ آشنا کرنے کے منتظر ہیں۔

پال جونز امریکی محکمہ خارجہ کی سینئر فارن سروس کے کیریئر ممبر ہیں۔ انہوں نے پولینڈ میں 2015 سے 2018 تک بطور سفیر خدمات سرانجام دیں ہیں۔

قبل ازیں انہوں نے بطور پرنسپل نائب معاون وزیر خارجہ برائے یورپ اور یورو ایشیائی امور (2013 سے 2015 ) ، ملائیشیا میں بطور امریکی سفیر (2010 سے2013 تک ) ، بیک وقت نائب امریکی خصوصی ایلچی برائے افغانستان و پاکستان اور نائب معاون وزیر خارجہ برائے جنوب ایشیائی امور (2009 سے2010 ) کی ذمہ داریاں نبھائیں۔

وہ منیلا ، فلپائنمیں امریکی سفارتخانہ، ادارہ برائے یورپی سلامتی وتعاون ( اوسی ای ) میں امریکی مشن اور اسکوپجی، مقدونیہ میں امریکی سفارتخانہ میں نائب سفیرکے فرائض بھی نبھاچکے ہیں۔

پال جونز کے اعزازات میں صدارتی ایوارڈ برائے اعلیٰ خدمات، رابرٹ سی فریشیوئر میموریل ایوارڈ برائے قیامِ امن اور متعدد سپیرئرآنر ایوارڈ زشامل ہیں، وہ ہسپانوی، روسی اور تھوڑی بہت پولش زبان بولتے ہیں۔

انہوں نے کارنیل یونیورسٹی سے گریجویشن اور یونیورسٹی آف ورجینیا اور نیول وار کالج سے ماسٹرز کی ڈگریاں حاصل کیں۔

وہ ایوارڈ یافتہ اور فری لانس مصنفہ کیتھرین جونز سے رشتہ ازدواج میں منسلک ہیں اور اُن کے دو بچے ایلکسنڈرا اور ہیل ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں