The news is by your side.

Advertisement

ٹرمپ کی ناکامی : غیر ملکی طلبہ کو امریکہ سے بے دخل کرنے کا فیصلہ واپس

بوسٹن : ٹرمپ انتظامیہ نے آن لائن کلاسز لینے والے والے طلبا و طالبات کو امریکہ سے بے دخل کرنے کا فیصلہ واپس لے لیا، فیصلے سے لاکھوں غیر ملکی طلبا کی ملک بدری کا خطرہ ٹل گیا۔

تفصیلات کے مطابق ٹرمپ حکومت کو علم دشمن اقدام کو واپس لینا پڑگیا، ٹرمپ انتظامیہ نے غیرملکی طلبا کو بےدخل کرنے کا فیصلہ واپس لے لیا۔

امریکا کی 17 ریاستوں، ڈسٹرکٹ آف کولمبیا، ہارورڈ اور میساچوسٹس انسٹی ٹیوٹ کی جانب سے غیر ملکی طلبہ کی ملک سے بے دخلی سے متعلق ٹرمپ انتظامیہ کے متنازع فیصلے کے خلاف دائر درخواست پر سماعت ہوئی۔

عداالتی کارروائی کے دوران ٹرمپ انتظامیہ نے آن لائن کلاسز لینے والے والے طلبا و طالبات کو امریکہ سے بے دخل کرنے کا فیصلہ واپس لے لیا، عدالت نے اپنے ریمارکس میں کہا کہ امیگریشن حکام6جولائی کے فیصلے کو واپس کرنے پر راضی ہوگئے ہیں۔

واضح رہے کہ امریکی امیگریشن اینڈ کسٹمز انفورسمنٹ کی جانب سے ایک ہفتہ قبل اعلان کیا گیا تھا کہ موسم خزاں میں شروع ہونے والے تعلیمی سال کے لیے ایسے طلبہ کو ویزا جاری نہیں کیا جائے گا جن کی تمام کلاسیں آن لائن ہوں گی اور جو طلبہ ملک میں موجود ہیں، انہیں واپس جانا پڑے گا۔

مزید پڑھیں : امریکا سے غیرملکی طلباء کو نکالنے کا ٹرمپ انتظامیہ کا فیصلہ عدالت میں چیلنج

سترہ  ریاستوں نے عدالت میں دائر مقدمے کی درخواست میں کہا گیا تھا کہ ٹرمپ انتظامیہ کے حکم نامے سے کالجوں اور یونیورسٹیوں کی احتیاط سے کی گئی منصوبہ بندی ناکام ہو جائے گی جو وہ کئی مہینوں سے کر رہی تھیں۔

اس کے نتیجے میں بہت سے طلبہ کو وبا کے دوران وطن جانا پڑے گا جہاں ان کی تعلیم حاصل کرنے کی اہلیت شدید متاثر ہو سکتی ہے۔

fb-share-icon0
Tweet 20

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں