site
stats
پاکستان

ٹرمپ انتظامیہ شکیل آفریدی کی رہائی کے لیے متحرک

نیویارک : پاکستان میں غداری کے مقدمے میں قید ڈاکٹر شکیل آفریدی کی رہائی کے لیے امریکا نے حکومتِ پاکستان پردباؤ بڑھانا شروع کردیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق امریکا نے پاکستان میں گرفتار پاکستانی ڈاکٹر اور پولیو مہم کے انچارج شکیل آفریدی کی رہائی کے لیے دباؤ ڈالنا شروع کردیا ہے اور اس حوالے سے امریکی حکام نے پاکستان سے رابطہ کیا ہے۔

امریکی اخبار دی وال اسٹریٹ جرنل نے دعویٰ کیا ہے کہ ٹرمپ انتظامیہ اسامہ بن لادن کی تلاش میں معاونت کرنے والے ڈاکٹر شکیل آفریدی کی رہائی کے لئے متحرک ہو چکی ہے اور اس حوالے سے امریکی حکام نے پاکستان سے رابطہ بھی کیا ہے۔

امریکی اخبار نے شکیل آفریدی کے وکلاء سے بھی رابطہ کیا اور ان کے حوالے سے انکشاف کیا کہ ملک میں آب و ہوا تیزی سے تبدیل ہونے کی وجہ سےشکیل آفریدی کی صحت کو خطرات لاحق ہو سکتے ہیں اس لیے انہیں علاج کی غرض سے بیرون ملک بھیجا جائے

امریکی اخبار کے مطابق ڈاکٹر شکیل آفریدی کی اگلی سماعت 24 مئی کو ہوگی جس سے قبل ہی امریکی حکومت متحرک ہوگئی ہے اور اس حوالے سے دونوں ممالک کے درمیان ابتدائی گفت و شنید ہو گئی ہے۔

ذرائع کا کہنا ہے کہ اگلے ہفتے وزیراعظم پاکستان نواز شریف اور صدر امریکا ڈونلڈ ٹرمپ ملاقات ریاض میں متوقع ہے جس میں ٹرمپ شکیل آفریدی کی رہائی کے لیے ایک بار پھر وزیراعظم سے بات کریں گے۔

اے آر وائی نیوز سے بات کرتے ہوئے پی ٹی آئی کے رہنما اسد عمر کا کہنا تھا کہ اگر شکیل آفریدی کو رہا ہی کرنا ہے تو عافیہ صدیقی کے بدلے رہا کیا جائے۔

نوید قمر نے کہا کہ ڈاکٹر شکیل آفریدی کو موجودہ حالات میں رہائی ملی تو یہ حیران کن نہیں ہوگا، ریمنڈ ڈیوس واپس جاسکتا ہے تو شکیل آفریدی بھی رہا ہوسکتا ہے۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top