The news is by your side.

Advertisement

ایم کیو ایم رہنما کی سزا کے خلاف اپیل پر 17 سال بعد فیصلہ

کراچی: متحدہ قومی موومنٹ پاکستان کے رہنما عامر خان کی سزا کے خلاف اپیل پر 17 سال بعد فیصلہ سنا دیا گیا۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق سندھ ہائی کورٹ نے عامر خان اور طارق باٹا کی سزا کے خلاف اپیل پر فیصلہ سناتے ہوئے سزا کالعدم قرار دے دی۔

عدالت نے عامر خان کی سزا بڑھانے کے لیے سندھ حکومت کی درخواست مسترد کرتے ہوئے ایم کیو ایم رہنما اور طارق باٹا کو بری کر دیا۔ یاد رہے کہ انسداد دہشت گردی عدالت نے عامر خان کو 10 سال اور طارق باٹا کو عمر قید کی سزا سنائی تھی۔

پراسیکیوٹر نے عدالت کو بتایا کہ ملزمان نے 23 فروری 2003 کو ضمنی الیکشن کے موقع پر ایم کیو ایم کے 2 کارکنوں پر فائرنگ کر کے قتل کر دیا تھا۔ پولیس نے بتایا کہ 2003 میں عامر خان اس وقت ایم کیو ایم حقیقی کے جنرل سیکریٹری تھے۔ پراسیکیوٹر نے کہا کہ اے ٹی سی نے عامر خان کو 10 سال قید جب کہ ملزم طارق کو عمر قید کی سزا سنائی تھی۔

واضح رہے کہ ملزم طارق باٹا 17 سال سے جیل میں ہیں جب کہ عامر خان ضمانت پر رہا ہیں، پولیس نے اس کیس میں شریک ملزم رئیس عرف ٹوپی سمیت 2 ملزمان کو مفرور قرار دیا تھا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں