The news is by your side.

Advertisement

چمن میں نامعلوم ملزمان کی فائرنگ، سابق سینیٹر داؤد خان زخمی

چمن : عوامی نیشنل پارٹی کے رہنما و سابق سینیٹر داؤد خان اچکزئی نامعلوم ملزمان کی فائرنگ میں زخمی ہوگئے، جنہیں طبی امداد کے لیے کوئٹہ اسپتال منتقل کردیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق بلوچستان کے شہر چمن کے علاقے قلعہ عبداللہ میں نامعلوم ملزمان کی جانب سے فائرنگ کی گئی ہے جس کے نتیجے میں عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی نائب صدر و سابق سینیٹر داؤد خان زخمی ہوگئے ہیں۔

لیویز ذرائع کا کہنا ہے کہ سابق سینیٹر داؤد اچکزئی کے محافظوں کی جوابی فائرنگ سے حملہ آور موقع سے فرار ہوگئے، جبکہ داؤد خان اچکزئی کو طبی امداد کے لئے کوئٹہ منتقل کردیا گیا۔

لیویز ذرائع کا کہنا ہے کہ فائرنگ کا واقعہ علاقہ توت اڈا میں علی الصبح پیش آیا تھا جہاں حملہ آوروں نے اے این پی دفتر میں گھس کر فائرنگ کی تھی، نامعلوم مسلح ملزمان دیوار پھلانگ کر باچا خان مرکز میں داخل ہوئے۔

داؤد خان پر حملہ آوروں کی فائرنگ کے جواب میں محافظوں کی فائرنگ کے تبادلے میں دفتر کے اندر موجود گاڑیاں جو بھی نقصان پہنچا ہے۔

عوامی نیشنل پارٹی کے رہنما زمرک خان اچکزئی کا کہنا ہے کہ حملہ آور کی فائرنگ کے نتیجے میں داؤد خان اچکزئی کو بازو میں 2 گولیاں لگی ہیں, جنہیں کوئٹہ اسپتال منتقل کردیا گیا ہے۔


سانحہ مستونگ کے مزید زخمی دم توڑ گئے‘ شہداء کی تعداد 149 ہوگئی


یاد رہے کہ چند روز قبل صوبہ بلوچستان کے ضلع مستونگ میں بلوچستان عوامی پارٹی کی کارنر مٹینگ میں دھماکا ہوا جس کے نتیجے میں پی بی 35 سے صوبائی اسمبلی کے امیدوار سراج ریئسانی سمیت 150 کے قریب افراد شہید ہوئے تھے، جبکہ 122 سے زخمی ہیں جن میں سے متعدد کی حالت تشویشناک ہے۔


بنوں: ایم ایم اے امیدوار اکرم درانی کے قافلے پر حملہ، 4 افراد جاں بحق


خیال رہے کہ رواں سال انتخابات کے دوران انتخابی امیدواروں پر کیا جانے والا یہ چوتھا حملہ ہے۔ بنوں میں بھی چند روز متحدہ مجلس عمل کے امیدوار اکرم درانی کے قافلے پر بم حملہ کیا گیا تھا، جس کے نتیجے میں 4 افراد جاں بحق اور 35 زخمی ہوئے جبکہ اکرم درانی محفوظ رہے۔


پشاور: اے این پی کی کارنر میٹنگ میں خودکش دھماکا، ہارون بلور سمیت 13 شہید


واضح رہے کہ اس سے قبل 10 جولائی کو پشاور کے علاقہ یکہ توت میں عوامی نیشنل پارٹی کی انتخابی مہم کے دوران خودکش دھماکہ ہوا تھا جس میں اے این پی کے امیدوار ہارون بلور شہید ہوگئے تھے۔ دھماکے میں مزید 21 افراد بھی شہید ہوئے تھے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں‘ مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک’پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں