The news is by your side.

Advertisement

قیام پاکستان سے دو فیصد اشرافیہ ملک پر قابض ہے، جسٹس انور ظہیر جمالی

کراچی : چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس انور ظہیر جمالی نے کہا ہے کہ ملک پر 68 برسوں سے دو فیصد اشرافیہ قابض ہے ۔

جمہوریت کے نام پر پانچ فیصد افراد حکمرانی کررہے ہیں اور پچاسی فیصد عوام زندگی کی سہولیات سے محروم ہیں۔ ان خیالات کااظہار انہوں نے بانی پاکستان قائد اعظم محمد علی جناح کے مادرعلمی سندھ مدرستہ الاسلام یونیورسٹی کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

انہوں نے کہا کہ 68 سال گذرنے کے باوجود پاکستان فلاحی ریاست نہیں بن سکا، اورپاکستان کے عوام کومذہب ،صوبائیت ، قومیت کی بنیاد پر تقسیم کیا گیا ہے اور تقسیم کرنے کا عمل جاری ہے۔

1971 میں ملک دو لخت ہوا ، لیکن ہم سب نے ماضی کی غلطیوں سے سبق نہیں سیکھا، انہوں نے کہا کہ ہر اسلامی ملک عالمی سازشوں کا شکار ہے ،آج ہم باہمی اختلافات بھلاکر ایک قوم بن جائیں۔

جسٹس انور ظہیر جمالی نے کہا کہ پاکستان کی عدلیہ اپنی ذمہ داریاں پوری کرنے میں کوشاں ہے ،عدلیہ کے مسائل حل ہونے میں کم از کم پانچ سال لگ جائیں گے ۔

اس سے قبل جسٹس آغارفیق ،جسٹس ندیم اختر، جسٹس رٹائرڈ دیدار حسین شاہ، جسٹس رٹائرڈ حامد مرزا، اور ایس ایم آئی یو کے وائس چانسلر محمد علی شیخ نے خطاب کیا۔

 

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں