The news is by your side.

Advertisement

آرنلڈ کلاسک چیمپیئن عاطف انور کا آنکھیں عطیہ کرنے کا اعلان

میلبورن: آرنلڈ کلاسک چیمپیئن شپ کے فاتح عاطف انور نے بعد از مرگ اپنی آنکھیں عطیہ کرنے کا اعلان کردیا‘ یہ اعلان انہوں کراچی آمد کے موقعہ پر کیا۔

عاطف آسٹریلیا کے شہری ضرور ہوگئے ہیں لیکن پاکستان سے ان کی محبت کبھی ختم نہیں ہوسکتی۔ چند روز قبل عاطف انوراپنے اہل خانہ کے ہمراہ کراچی آئے تھے اسی دوران انہوں نے اے آر وائی نیوزسے خصوصی بات چیت کی۔


کون ہیں یہ عاطف انور؟

آسٹریلیا کی سرزمین پر پہلی مرتبہ آرنلڈ کلاسک چیمپئین شپ کا انعقاد ہوا جس میں باڈی بلڈنگ سمیت مختلف کیٹگری میں کانٹے کے مقابلے ہوئے۔

18 مارچ 2015ء  میلبرن کا مقامی ایرینا حاضرین اور ایتھلیٹس سے کھچا کھچ بھرا ہوا تھا، 28 ممالک کے بہترین تن سازوں کے درمیان 100 کلوگرام سے زائد کیٹیگری میں ایک تن ساز اکیلا کھڑا تھا جس کی پہچان پاکستان اور نام عاطف انور ہے۔

مضبوط مسل کے حامل پاکستانی باڈی بلڈر کا ہمیشہ سے خواب تھا کہ عالمی سطح پر پاکستان کا نام روشن ہوجائے، ساتھ ہی اپنے آئیڈئیل آرنلڈ شوارزنیگر سے ملنا بھی تھا کہ جس کی تصاویراورباڈی بلڈنگ کی ویڈیوز دیکھ کرحوصلہ اورجوش بڑھ جاتا تھا۔

تالیوں کا جب شور تھما تو عاطف انور میلبرن کے مقامی ایرینا میں نم آنکھوں اورگلے میں چیمپیئن میڈل پہنے ہوئے تھے۔ یہ ناقابل یقین منظر تھا جب دنیائے باڈی بلڈنگ کے نامور باڈی بلڈر اور 7 مرتبہ کے مسٹر اولمپیا آرنلڈ شوارزنگر نے عاطف انور کا ہاتھ تھام کر انھیں خراج تحسین پیش کیا۔

وہ لمحہ عاطف انور کے لیے کسی خواب کی تعبیر سے کم نہیں تھا،خوشی کا ٹھکانہ اس وقت اورعروج پر پہنچ گیا جب آرنلڈ کلاسک کے بانی آرنلڈ شوارزینگر نے اسٹیج پر آکرعاطف انورکو چیمپیئن کے اعزازسے نوازا۔

سابق مسٹر پاکستان اورمسٹریونیورس میں چوتھی پوزیشن حاصل کرنے والے واحد باڈی بلڈر عاطف انور 2011ء میں آسٹریلیا چلے گئے تھے۔ انہوں نے آسٹریلیا کے ڈَروِن شہر میں میونسپل کونسل کے لیے پارکنگ انسپکٹر کے طور پر خدمات انجام دیں اور رات کے وقت نائٹ کلب میں باؤنسر بن کر کام کرتے رہے۔

18 گھنٹے مسلسل دو نوکریاں کرنے کے باوجود عاطف انور نے بھاری وزن اٹھاتے ہوئے انتھک محنت کو جاری رکھا اورخواب کو حقیقت کا روپ دے دیا۔

آف سیزن میں عاطف انور د بھر میں آٹھ مرتبہ کھانے کے ساتھ فوڈ سپلیمنٹ استعمال کرتے اور مقابلے کی تیاری کے دوران ان کی مزید ڈائٹ بڑھ جاتی تھی۔

آرنلڈ کلاسک آسٹریلیا جیتنے کے بعد اب وہ دہری شہریت کے حامل ہیں، 36 سال کے عاطف انورکو انٹرنیشنل فیڈریشن آف باڈی بلڈنگ کا پرو کارڈ بھی مل چکا ہے۔ وہ اب کوالیفائیڈ ٹرینر بھی بن چکے ہیں اور ان کا اگلا ہدف مسٹر اولمپیا کا ٹائٹل جیتنا ہے جو کہ ہر تن ساز کےلیے کافی اہمیت کا حامل ہوتا ہے۔

پارکنگ انسپکٹر اور باڈی بلڈنگ کی وجہ سے انھیں ’’دی پارکینیٹر‘‘ کا خطاب دیا گیا ہے ۔


کراچی پہنچنے کے بعد اے آر وائی نیوز سے بات چیت کرتے ہوئے انہوں نے بتایا کہ وہ بعد از مرگ اپنی آنکھیں کسی ضرورت مند کوعطیہ کردیں گے۔

چیمپئن شپ جیتنے پر حکومت نے کوئی حوصلہ افزائی نہ کی

ساتھ ہی عاطف نے مایوسی کا اظہارکیا اور کہا کہ آرنلڈ کلاسک چیمپین شپ جیتنے کے بعد انھیں حکومت کی  جانب سے نہ حوصلہ افزائی دی گئی اور نہ مبارک باد کے لیے کسی حکومتی شخصیت کا فون آیا۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں