The news is by your side.

Advertisement

این سی او سی کا اجلاس : زیادہ کورونا کیسز والے علاقوں میں مائیکرو اور اسمارٹ لاک ڈاؤنز کی تجویز

اسلام آباد : وفاقی وزیر اسد عمر کی زیر صدارت نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کے اجلاس میں بتایا گیا کہ بازاروں میں رش، شادی ہالز کی وجہ سے کورونا وائرس کا پھیلاؤ زیادہ ہو رہا ہے، جن علاقوں میں کیسز زیادہ ہیں وہاں مائیکرو ،اسمارٹ لاک ڈاؤنز کیا جائے۔

تفصیلات کے مطابق وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی اسد عمر کی زیر صدارت نیشنل کمانڈ اینڈ آپریشن سینٹر کا اجلاس ہوا، جس میں معاون خصوصی ڈاکٹر فیصل سلطان سمیت متعلقہ حکام شریک ہوئے۔

این سی او سی اجلاس میں کورونا صورتحال، ایس او پیز پر عملدرآمد سمیت حکومتی اقدامات کاتفصیلی جائزہ لیا گیا ، بریفنگ میں بتایا گیا کہ کوروناکیسز اور اموات میں مسلسل چوتھے ہفتے اضافہ دیکھنے میں آ رہا ہے ، این سی سی نےکورونا کی دوسری لہر پرتجویزکردہ اقدامات پربھی غور کیا۔

بازاروں میں رش، شادی ہالز کی وجہ سے کورونا وائرس کا پھیلاؤ زیادہ ہو رہا ہے، غیر ضروری اجتماعات ،ایس او پیز پرعمل نہ ہونے سے پھیلاؤ زیادہ ہو رہاہے، جن علاقوں میں کیسز زیادہ ہیں وہاں مائیکرو ،اسمارٹ لاک ڈاؤنز کیا جائے۔

صوبائی چیف سیکریٹریز نے ویڈیو لنک کے ذریعے کورونا حکمت عملی اور اقدامات سے آگاہ کیا۔

گذشتہ روز وزیراعظم عمران خان نے قومی رابطہ کمیٹی کے اجلاس میں این سی اوسی کوکوروناپرضروری گائیڈلائنز کے اجرا کی ہدایت کرتے ہوئے کہا تھا وبا بڑھنے کے پیش نظر اسپتالوں کی استعداد کار بہتربنائیں۔

مزید پڑھیں : وزیراعظم کی این سی اوسی کو کورونا پر ضروری گائیڈ لائنز کے اجرا کی ہدایت

وزیراعظم نے صحت کے تحفظ کیلئے بروقت اقدامات پر این سی اوسی کی تعریف کی اور قومی رابطہ کمیٹی نے این سی اوسی کےحالیہ اقدامات کی تائید کرتے ہوئے این سی سی کے ماسک کے استعمال اور مارکیٹس بندش کے اوقات میں کمی کی توثیق کردی تھی۔

قومی رابطہ کمیٹی نے این سی سی کی ریسٹورینٹ،شادی ہال،اسمارٹ لاک ڈاؤن کےفیصلے کی بھی توثیق کی۔

عمران خان نے اسپتالوں میں انتہائی نگہداشت کےآلات کی دستیابی کی ہدایت کرتے ہوئے کہا تھا این سی اوسی فریقین کی مشاورت سے مستقبل کا کورس ترتیب دے۔

اس سے قبل وفاقی کابینہ کے اجلاس میں وزیراعظم عمران خان نے ملک میں کورونا صورتحال کے حوالے سے کہا تھا کہ کاروبار ، اسکولز اور صنعتیں بند نہیں کریں گے، کورونا ایس او پیز پر سخت عملدرآمد کرنا ہوگا۔

Comments

یہ بھی پڑھیں