The news is by your side.

Advertisement

اشرف غنی کی ڈاکٹر عارف علوی اور اپوزیشن رہنماؤں سے ملاقاتیں، دو طرفہ امور پر تبادلۂ خیال

اسلام آباد: افغانستان کے صدر اشرف غنی کی صدرِ مملکت ڈاکٹر عارف علوی سے ایوان صدر میں ملاقات ہوئی جبکہ اپوزیشن رہنماؤں نے بھی مہمان سے ملاقات کی اور مختلف امور پر تبادلۂ خیال کیا۔

تفصیلات کے مطابق دو روزہ دورے پر پاکستان پہنچنے والے افغان صدر اشرف غنی ایوان صدر پہنچے جہاں اُن کا پرتپاک استقبال کیا گیا، اس موقع پر مہمان کو بچوں نے پھول بھی پیش کیے، دونوں رہنماؤں کی وفود کی سطح پر بھی ملاقات ہوئی۔

اشرف غنی کا دورۂ پاکستان انتہائی اہمیت کا حامل ہے، معاونِ خصوصی برائے اطلاعات

دوسری جانب معاونِ خصوصی برائے اطلاعات فردوس عاشق اعوان نے کہا ہے کہ جنگ کی وجہ سے افغان قوم نے مشکلات برداشت کیں، آج تک کسی بھی ملک نے 35 لاکھ مہاجرین کو پناہ نہیں دی مگر ہم نے پڑوسی ہونے کا بھرپور حق ادا کیا۔ اُن کا کہنا تھا کہافغان صدرکادورہ پاکستان انتہائی اہمیت کاحامل ہے۔

بلاول بھٹو کی افغان صدر سے ملاقات

قبل ازیں افغان صدر کی اپوزیشن رہنماؤں سے ملاقات بھی ہوئی۔ بلاول بھٹو زرداری پیپلزپارٹی کے اعلیٰ سطح کا وفد لے کر اسلام آباد کے ہوٹل میں ملاقات کے لیے پہنچے۔

بلاول بھٹو نے افغان صدر کو پاکستان آمد پر خوش آمدید کہا اور باہمی دلچسپی کے امور پر تفصیلی بات چیت بھی کی۔ پیپلزپارٹی کے چیئرمین نے افغان امن عمل کے حوالے سے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔

شہباز شریف کی اشرف غنی سے ملاقات

بعد ازاں مسلم لیگ ن لیگ کےصدر شہبازشریف کی افغان صدراشرف غنی سےملاقات ہوئی جس میں اشرف غنی نے بیگم کلثوم نواز کی وفات پر تعزیت کی اور سابق وزیراعظم نوازشریف کے لیے نیک تمناؤں کا اظہار بھی کیا۔

اشرف غنی کا کہنا تھا کہ شہباز شریف سے1980میں پہلی ملاقات ہوئی تھی مگر ہمارا تعلق آج بھی رواں دواں ہے۔ اس موقع پر مسلم لیگ ن کے صدر کا کہنا تھا کہ  مصروفیت کے باوجودملاقات کی دعوت پر افغان صدر کے شکرگزار ہیں، افغانستان میں پائیدار امن، سلامتی، خوشحالی سب کاخواب ہے، پاکستان اور افغان عوام  بدامنی کی وجہ سے مشکلات جھیل چکےہیں۔اُن کا کہنا تھا کہ پاکستان افغانیوں کا دوسرا گھر ہے، ہم آپ کوافغان صدرہی نہیں بلکہ محترم بھائی تصور کرتے ہیں۔

مزید پڑھیں: وزیرا عظم عمران خان اور افغان صدراشرف غنی کی ون آن ون ملاقات

علاوہ ازیں جماعت اسلامی کے امیر اور سینیٹر سراج الحق کی بھی افغان صدر سے ملاقات ہوئی جس میں دو طرفہ تعلقات سمیت مختلف امور پر تفصیلی تبادلۂ خیال کیا گیا۔

سراج الحق کا کہنا تھا کہ پاکستان، افغانستان کاروشن مستقبل امن سےوابستہ ہے، امن کے لیے افغان جماعتوں میں باہمی بات چیت بہت ضروری ہے، دونوں ممالک کے پاس دوستی کے علاوہ کوئی اور راستہ نہیں، دونوں ممالک کےدرمیان فاصلےامن دشمنوں کے پیدا کردہ ہیں، اب وقت آگیا ہے کہ ان فاصلوں کو ختم ہوناچاہیے۔ افغان صدر کا کہنا تھا کہ ہم پاکستان سےتعلقات کوبڑی اہمیت دیتےہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں