The news is by your side.

Advertisement

آصف علی زرداری کا سلیکٹڈ لفظ پر پابندی پر پارٹی سے مشاورت کا فیصلہ

اسلام آباد : سابق صدر آصف علی زرداری نے ایوان میں سلیکٹڈ لفظ پر پابندی پر پارٹی سے مشاورت کا فیصلہ کرلیا اور کہا بات کریں گے کے یہ پابندی لگا سکتے ہیں یا نہیں۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان پیپلز پارٹی شریک چیئر مین اور سابق صدر آصف علی زر داری سے میڈیا سے بات چیت کے دور ان صحافی نے سوال کیا کہ کل لفظ سلیکٹڈ پر ایوان میں پابندی لگادی گئی، جس پر آصف علی زر داری نے جواب دیا کہ اس معاملے پر ارکان سے مشاورت کریں گے، ہم لفظ سلیکٹڈ پر بات کریں گے کہ یہ پابندی لگا سکتے ہیں یا نہیں۔

صحافی نے سوال کیا کہ اس پارلیمنٹ میں چور اور ڈاکو بھی کہا گیا اب لفظ سلیکٹڈ پر اعتراض ہورہا ہے، سابق صدر نے جواب دیا کہ دیکھ لیں آپ !!۔

صحافی نے سوال کیاکہ گزشتہ روز چیئرمین سینیٹ آپ کے پاس آئے تھے کوئی مشورہ دیا آپ نے، زر داری نے جواب دیا کہ انہیں کہا ہے کہ آپ کو بین کر دیا جائے۔

مزید پڑھیں : ایوان میں وزیراعظم کیلئے سلیکٹڈ کا لفظ استعمال کرنے پر پابندی

گذشتہ روز قومی اسمبلی میں بجٹ سیشن کے اجلاس میں وفاقی وزیر عمر ایوب نے نکتہ اعتراض پر کہا تھا ہم حکومتی بنچوں سے تحریک استحقاق پیش کرنا چاہتے ہیں، ایوان میں وزیراعظم کو سلیکٹڈ کے نام سے پکارا جاتا ہے، وزیراعظم منتخب ہیں سلیکٹڈ کہنےسے ایوان کا استحقاق مجروح ہوتا ہے۔

جس کے بعد ڈپٹی اسپیکر قاسم سوری نے ایوان میں وزیراعظم کے لیے سلیکٹڈ کا لفظ استعمال کرنے پر پابندی لگادی تھی۔

قاسم سوری نے ہدایت کی جو بھی اس ہاؤس کا ممبر ہے وہ ووٹ لے کر آیا ہے، آئندہ کوئی سلیکٹڈ لفظ ایوان میں استعمال نہ کرے، ایوان کے نمائندے خود ایوان کی تذلیل کرتے ہیں۔

خیال رہے کہ اپوزیشن کی جانب سے ایوان میں وزیراعظم عمران خان اور حکومت کے لئے سلیکٹڈ کا لفظ استعمال کیا جاتا ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں