site
stats
عالمی خبریں

اسسٹنٹ پروفیسر نے اپنی ماں کو چوتھی منزل سے دھکا دے کر قتل کردیا

Killing

ممبئی : اسسٹنٹ پروفیسر نے طویل تیمارداری سے عاجز آکر اپنی ضعیف اور مفلوج ماں کو چوتھی منزل سے نیچے پھینک کر ہلاک کردیا اور واقعہ کو خود کشی کا رنگ دینے کی کوشش کی۔

تفصیلات کے مطابق دل دہلانے والا یہ واقعہ بھارت کی ریاست گجرات میں تین ماہ قبل پیش آیا تھا جسے اُس وقت ضعیف ماں کے بیٹے نے خود کشی قرار دے کر پولیس کو مطمئن بھی کر دیا تھا۔

بیمار ماں کا ناخلف بیٹا سندیپ نتھوانی راج کوٹ کالج میں اسسٹنٹ پروفیسر ہے اور اپنی اہلیہ اور مفلوج ماں کے ساتھ ایک فلیٹ میں رہائش پذیر تھا جہاں فالج کے مرض میں مبتلا ماں کی تیمارداری سے جان چھڑانے کے لیے ماں کو موت کے گھاٹ ہی اتار دیا۔

ابتدا میں سندیپ نے پولیس کو بتایا کہ میری ماں فالج کی مریضہ تھیں جس کے باعث ان کا دھڑ آدھا مفلوج ہوچکا تھا اور انہیں چلنے پھرنے میں کافی دقت کا سامنا تھا جس سے پریشان ہوکر وہ  ڈیپریشن کا شکار ہو گئی تھیں اور چوتھی منزل سے کود کر خود کشی کرلی۔

تاہم دو ماہ بعد ایک محلے دار کی کال کی تمام بھانڈا پھوڑ دیا جس نے بتایا کہ ماں اتنی بیمار تھیں کہ وہ اگلی منزل پر اکیلے نہیں جا سکتی تھیں اور نہ ہی چھت کی چار فٹ لمبی دیوار پھلاند سکتی تھیں۔

پولیس نے محلے دار کی کال کو بنیاد بناتے ہوئے مقدمے کی دوبارہ تحقیقات کی اور سندیپ کے فلیٹ کے باہر لگے سی سی ٹی وی فوٹیجز دیکھے تو اس میں اسسٹنٹ پروفیسر کو اپنی مفلوج کو سہارا دیکر اگلی منزل پر لے جاتے اور واپسی اکیلے آتے دیکھا جا سکتا ہے۔

سی سی ٹی وی فوٹیجز میں واقعہ کے چند ہی منٹ بعد ایک محلے دار کو بھاگتے ہوئے سندیپ کے دروازے پر آتے اور اسے ماں کے گر جانے کی اطلاع دیتے بھی دیکھا جا سکتا ہے۔

سی سی ٹی وی فوٹیجز کی شہادت کے بعد اسسٹنٹ پروفیسر سندیپ  اور اس کی اہلیہ کو حراست میں لے لیا گیا ہے جہاں اس نے اپنے جرم کا اعتراف کرتے ہوئے کہا کہ ماں کی بیماری اور چڑے چڑے پن نے یہ انتہائی قدم اُٹھانے پر مجبور کیا۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top