The news is by your side.

Advertisement

اٹک خودکش حملے کی ابتدائی رپورٹ تیار کرلی گئی

 لاہور: اٹک بم دھماکے میں ملوث ملزمان کاتاحال سراغ نہیں مل سکا، سی ٹی ڈی اور حساس اداروں نے وزیرِاعلی پنجاب کو اٹک خودکش دھماکے کی ابتدائی رپورٹ بھجوادی، سانحہ کا ایک اور زخمی دم توڑ گیا، شہداء کی تعداد بائیس ہوگئی ہے۔

کاؤنٹرٹیررازم ڈیپارٹمنٹ اورحساس اداروں نےابتدائی رپورٹ تیارکرلی ہے، وزیراعلی شہبازشریف کو بھیجی گئی رپورٹ میں بتایا گیا ہے کہ خود کش بمبار نے بیس کلو سے زائد بارودی مواد استعمال کیا، سابق صوبائی وزیر داخلہ کی شہادت چھت گرنے کے باعث ہوئی۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ شجاع خانزادہ کو مختلف کالعدم تنظیموں کی جانب سے خطرہ تھا لیکن اٹک پولیس کی جانب سے شہید وزیر داخلہ کے لیے مناسب حفاظتی اقدامات نہیں کئے گئے۔

لشکر جھنگوی کے سابق امیر ملک اسحاق کی ہلاکت کے بعد سابق وزیرِ داخلہ کو موومنٹ کے حوالے باخبر رکھنے کی ہدایات جاری کی گئی تھیں، سی ٹی ڈی اور حساس اداروں نے رپورٹ وزیر اعلی پنجاب کو ارسال کردی ہے۔

جوائنٹ انویسٹی گیشن ٹیم نے جائے وقوعہ سے ملنے والےشواہد محفوظ اورموبائل فون قبضے میں لے کر تحقیقات کے بعد رپورٹ تیار کی، حملے کا مقدمہ ایس ایچ اوکی مدعیت میں رنگو تھانے میں درج کیا گیا، جس میں قتل، اقدام قتل ،دہشت گردی کی دفعات شامل گئیں ہیں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں