site
stats
کھیل

آزادی کپ ٹرافی کی تقریب رونمائی، سرفرازاحمد فتح کے لیے پُرعزم

لاہور: آزادی کپ ٹرافی کی تقریب رونمائی میں قومی ٹیم کے کپتان سرفراز احمد اور ورلڈ الیون کے کپتان فاف ڈوپلیسی نے ٹرافی کی رونمائی کی جب کہ پاکستان اور ورلڈ الیون کے درمیان پہلا ٹی ٹوئنٹی میچ کل کھیلا جائے گا.

آزادی کپ ٹرافی کی تقریب رونمائی کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے قومی ٹیم کے کپتان سرفراز احمد نے کہا کہ کل کے میچ کے لیے ہماری تیاریاں اچھی ہیں اور ٹرافی جینتے کے لیے ہر ممکن کوشش کریں گے.

سرفراز احمد نے کہا کہ ورلڈ الیون میں دنیا کے بہترین کھلاڑی شاامل ہیں جو ہمیں ٹف ٹائم دینے کی مکمل صلاحیت بھی رکھتے ہیں تاہم پاکستان بھی پوری تیاری کر کے میدان میں اترے گی اور ورلڈالیون کے خلاف بھر پور کارکردگی کا مظاہرہ کریں گے.

سرفراز احمد نے کہا کہ ہوم گراؤنڈ پر کھیلنے کا موقع مل رہا ہے اگر اچھا کھیلیں گے تو داد بھی ملے گی، امید ہے مقابلہ سخت ہوگا اور شائقین کرکٹ کو اچھی کرکٹ دیکھنے کو ملے گی اور ہماری بھی کوشش ہوگی عالمی منتخب پلیئرزکی ٹیم کوٹف ٹائم دیں گے.

انہوں نے کہا کہ ٹی ٹوئنٹی کی رینکنگ اچھی ہے اور ہماری کوشش ہوگی کہ اپنی پوزیشن برقرار رکھیں تاہم ٹی ٹوئنٹی میں کوئی ٹیم بڑی نہیں جواچھا کھیلتی ہے وہی فاتح ٹیم بنتی ہے.

ٹیم اسکواڈ کے حوالے سے انہوں نے کہا کہ فاسٹ بولر محمد عامردستیاب نہیں ہیں لیکن ہمارے پاس ان کا متبادل موجود ہے اور میں کسی ایک بالر پر انحصار نہیں کر رہا ہوں ٹیم کا مورال بلند ہے.

سرفراز احمد لکا کہنا تھا کہ ورلڈ الیون میں میرے پسندیدہ کھلاڑی ہاشم آملہ ہیں اور چیمپئنز ٹرافی کے بعد ذمے داری بڑھ گئی ہے اس لیے کوشش ہوگی کہ ایونٹ جیتیں اور قوم کے اعتماد پر اتریں.

کپتان قومی کرکٹ ٹیم سرفرازاحمد نے کہا کہ کراچی میرا ہوم گراؤنڈ ہے اور وہاں حالات اب بہتر ہو رہے ہیں جس کے بعد امید ہوچلی ہے کہ پی ایس ایل کے میچز کراچی میں بھی ہوں گے بعد ازاں کراچی کے بعد پورے ملک میں انٹرنیشنل میچز ہوں گے.

انہوں نے کہا کہ جنوبی افریقہ، انگلینڈ، بنگلہ دیش اور سری لنکا سمیت تمام بورڈز کا شکر گزار ہوں اور اب بھارت کی ٹیم بھی بہت جلد پاکستان آئے گی جس سے پاکستان میں کرکٹ کو مزید فروغ ملے گا.


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top