The news is by your side.

Advertisement

بلوچستان کا 419 ارب روپے سے زائد کا بجٹ ایوان میں پیش

کوئٹہ: صوبہ بلوچستان کا 419 ارب روپے سے زائد کا بجٹ ایوان میں پیش کر دیا گیا، بجٹ خسارہ 47 ارب روپے سے زائد رکھا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق بلوچستان اسمبلی کے بجٹ اجلاس میں صوبائی بجٹ وزیر خزانہ بلوچستان میر ظہور بلیدی نے پیش کیا، مجموعی طور پر بجٹ 419 ارب روپے سے زائد کا ہے۔

بجٹ میں ترقیاتی منصوبوں کے لیے 126 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں، جب کہ غیر ترقیاتی بجٹ 291 ارب روپے رکھا گیا ہے۔

میر ظہور بلیدی نے کہا کہ بجٹ پیش کرنا صوبائی حکومت کی آئینی ذمہ داری ہے، بلا سود قرضوں کی فراہمی کا سلسلہ شروع کیا جا رہا ہے، موجودہ حکومت کو مالی مشکلات کا سامنا کرنا پڑا ہے۔

تعلیم


بجٹ میں تعلیم کے لیے 60 ارب، امن و امان کے لیے 44 ارب 70 کروڑ، صحت کے لیے 26 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں۔

ساتھ میں یہ بھی بتایا گیا ہے کہ محکمہ تعلیم میں 1057 اسامیاں پیدا کی جائیں گی، 130 نئے پرائمری اسکول تعمیر کیے جائیں گے،جامعات کے لیے یونی ورسٹی فنانس کمیشن قایم کیا جائے گا، جب کہ انٹر کالجز کو ڈگری کالجز کا درجہ دینے کے لیے 445 ملین خرچ کیے جا چکے ہیں۔

صحت


صوبائی بجٹ میں صحت کے لیے 26 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں، وزیر خزانہ نے بتایا کہ محکمہ صحت میں 1019 نئی اسامیاں نکالی جا رہی ہیں۔

حادثات میں جانیں بچانے کے لیے ٹراما سینٹر کا قیام عمل میں لایا جائے گا، کینسر کے مریضوں کے لیے فنڈز، دل کے امراض کے لیے رقم مختص کی جائے گی، خضدار بولان میڈیکل کمپلیکس کے لیے 180 ملین روپے مختص کیے گئے ہیں۔

ترقیاتی بجٹ


بجٹ میں ترقیاتی منصوبوں کے لیے 126 ارب روپے مختص کیے گئے ہیں، جب کہ غیر ترقیاتی بجٹ 291 ارب روپے رکھا گیا ہے۔

پانی کے منصوبوں کے لیے 28 ارب روپے، کھیل و ثقافت اور سیاحت کے لیے 3 ارب 60 کروڑ روپے مختص کیے گئے ہیں۔ یہ بھی بتایا گیا کہ غیر ملکی تعاون سے 7 ارب 56 کروڑ روپے کے منصوبے بجٹ کا حصہ ہیں، صوبائی پی ایس ڈی پی 100 ارب 57 کروڑ روپے ہے ، وفاقی ترقیاتی گرانٹ سے 18 ارب 21 کروڑ روپے کے منصوبے شروع ہوں گے۔

دیگر شعبے


بلوچستان کے صوبائی بجٹ میں صنعت اور توانائی کے لیے 19 ارب 7 کروڑ، لائیو اسٹاک، جنگلات کے لیے 2 ارب 98 کروڑ روپے رکھے گئے ہیں۔

محصولات


صوبائی وزیر خزانہ کے مطابق صوبے کی اپنی آمدنی 34 ارب روپے ہے، وفاق سے محصولات کی مد میں 319 ارب روپے ملیں گے، جب کہ وفاق اور صوبے کے کل محصولات میں ملنے والی رقم 358 ارب روپے ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں