بلوچستان کا 2 کھرب 89 ارب کا بجٹ آج پیش کیا جائے گا -
The news is by your side.

Advertisement

بلوچستان کا 2 کھرب 89 ارب کا بجٹ آج پیش کیا جائے گا

آئندہ مالی سال کے لیے بلوچستان کا 289ارب روپے کا بجٹ آج پیش کیا جائےگا،صوبے کو 252ارب روپے کی آمدنی متوقع ہے،اس طرح بجٹ کا خسارہ 37ارب روپے رہنے کا امکان ہے۔

تفصیلات کے مطابق بلوچستان کا مالی سال 2016-2017 کے لیے بجٹ آج پیش کرنے کیلئے صوبائی اسمبلی کا بجٹ اجلاس سہ پہر چار بجےطلب کیاگیاہے جہاں وزیراعلیٰ نواب ثناء اللہ زہری صوبے کا ریکارڈ دو کھرب 89ارب روپے حجم کا بجٹ پیش کریں گے۔

یاد رہے یہ بلوچستان کی مخلوط حکومت کا چوتھا بجٹ ہے تاہم وزیراعلیٰ ثناء اللہ زہری کی حکومتی باگ دوڑ سنبھالنے کے بعد یہ اُن کا پہلا بجٹ ہوگا،اس سے قبل بجٹ سابق وزیر اعلیٰ ڈاکٹر عبد المالک بلوچ کی کابینہ نے پیش کیے تھے۔

بجٹ کےاعدادوشمار کےمطابق آئندہ مالی سال میں ،سرکاری ذرائع کے مطابق بجٹ خسارہ کم کرنے کے لئے سختی سے سادگی و بچت کےلئے اٹھائے گئے اقدامات ہر عمل در آمد کو یقینی بنایا جائے گا۔

سرکاری ملازمین کی تنخواہیں 10فیصد اضافے کا امکان ہے جب کہ 3 ہزار نئی ملازمتوں کے مواقع بھی پیدا کیے جائیں گے جب کہ بلوچستان کے سرکاری ملازمین کی پینشن میں بھی 10 فی صد اضافے کا امکان ظاہر کیا جارہا ہے

بجٹ میں غیرترقیاتی اخراجات کاتخمینہ دو کھرب 18ارب روپے رکھنےکی تجویز ہے جبکہ آئندہ مالی سال کی پی ایس ڈی پی کا سائز 71ارب سےزائد رہنے کی تجویز ہےجس میں تعلیم، صحت ، امن وامان ، آب پاشی، مواصلات اور پانی و توانائی کےشعبوں کو ترجیح دی جائے گی۔

بجٹ میں تعلیم کیلئے 42 ارب،صحت کیلئے 17ارب روپے مختص کرنے جبکہ امن وامان کیلئے 30ارب ،جنرل ایڈمنسٹریشن کیلئے 12 ارب روپے تک مختص کرنے کی تجویز ہے،آئندہ بجٹ میں سرکاری ملازمین کی تنخواہوں 10فیصد اضافہ کی تجویز ہے جبکہ 3 ہزار نئی ملازمتیں رکھی گئ ہیں۔

اسی طرح کوئٹہ شہر میں واٹر سپلائی کیلئے10 ارب اور شہر کی بہتری کیلئے پانچ ارب روپے کی تجویزہے،اسی طرح پانچ ڈویژنل ہیڈکواٹرز میں بنیادی سہولیات کی فراہمی کیلئے11ارب روپے مختص کئےجانے کی تجویز ہے جبکہ کوئٹہ میں ماس ٹرین سروس کیلئے دو ارب اور گرین بس سروس کیلئے ایک ارب روپےمختص کئےجانےکی بھی تجویزہے.

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں