The news is by your side.

Advertisement

بنی گالہ غیرقانونی تعمیرات کیس : سپریم کورٹ کا کورنگ نالہ کے ارد گرد تعمیرات گرانے کا حکم

اسلام آباد : بنی گالہ غیرقانونی تعمیرات کیس میں سپریم کورٹ نےدو ہفتوں میں ریگولرائزیشن کابینہ سےمنظور کرانے کی ہدایت کردی اور کورنگ نالہ کے ارد گرد تعمیرات گرانے کا حکم دیتے ہوئے دو ہفتے میں رپورٹ طلب کرلی۔

تفصیلات کے مطابق سپریم کورٹ میں بنی گالہ غیرقانونی تعمیراتی کیس کی سماعت چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکنی بینچ نے کی، سماعت شروع ہوئی توچیف جسٹس نے پوچھا بابراعوان صاحب آپ کو تعمیرات ریگولرائز کروانے میں کیا اعتراض ہے، تمام تعمیرات ہی ریگولرائزکی جائیں گی۔

بابراعوان نے کہا آپ کے حکم کےمطابق مل کرریگولرائزیشنز تیار کی ہیں۔

ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے عدالت کو بتایا کہ سی ڈی اے نےریگولیشنزفائنل کرلی ہیں، تیس مارچ سے پہلے کی تعمیرات ہی ریگولر ہوسکیں گی، بعد کی تعمیرات مسمار کی جائیں گی، جس پر جسٹس عمر عطا بندیال نے سوال کیا آٹھ مرلے کے پلاٹ کی قیمت صرف دس روپے وصول کریں گے کیا یہ مذاق نہیں ہے۔

چیف جسٹس نے ریمارکس دیئے کہ مستقبل میں کوئی بھی غیرقانونی تعمیرات نہ ہوں، ہمارا مقصد نالہ کورنگ اور بوٹینیکل گارڈن کا تحفظ ہے، ابھی آپ جا کر نعرہ لگائیں گے کہ گھروں کو مستثنٰی کروایا، نعرے میں کہیں کسی ادارے کی کوشش کا ذکرنہیں ہوگا، آپ نے صرف ووٹ مانگنے ہیں۔

 جسٹس ثاقب نثار نے  ریمارکس دیے کہ صبح کسی نے میسج بھیجا کہ چائنہ نے ترقی کیسے کی، چائنہ نے 400 کے قریب وزرا کوفارغ کرکے تمام ذمہ داران کے خلاف کاروائی کی تھی۔

عدالت نے حکم دیا کہ ریگولائیزیشنزاور متعلقہ قوانین کی دوہفتے منظوری اور سیوریج منصوبے کی ماہانہ پیشرفت رپورٹ پیش کی جائے۔

چیف جسٹس نے کہا کہ دو سے تین ہفتے میں کام نہ ہوا تو طارق فضل چوہدری ذمہ دار ہوں گے۔

عدالت نےکورنگ نالہ کے ارد گرد تعمیرات گرانے اوردو ہفتوں میں ریگولرائزیشن کوکابینہ سے منظور کرانے اور دوہفتے میں پیشرفت رپورٹ جمع کروانےکا حکم دے دیا۔

دوسری جانب سپریم کورٹ نے مارگلہ ہلزسٹون کرشنگ سے متعلق ازخود نوٹس نمٹا تے ہوئے حکم دیا کہ تمام صوبائی حکومتیں کمیٹی کی سفارشات پر عمل درآمد کریں۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں