The news is by your side.

Advertisement

کویت میں مریضوں سے متعلق بڑا فیصلہ

کویت کی حکومت نے اسپتالوں میں مختلف بہانوں سے طویل قیام کرنے والے غیرملکیوں سے ‏متعلق بڑا فیصلہ کر لیا۔

کویتی میڈیا کے مطابق حکومت نے فیصلہ کیا ہے کہ ایسے غیرملکی افراد جو غیرضروری طور پر ‏سرکاری اسپتالوں میں موجود ہیں انہیں ملک بدر کر دیا جائے گا۔

وزارت صحت نے اسپتالوں میں مریضوں کے غیرضروری قیام پر پابندی عائد کرنے کا بھی فیصلہ کیا ‏ہے۔

یہ فیصلہ وزارت صحت اور وزارت داخلہ کے باہمی اتفاق ہوا جس کا مقصد غیرضروری طور پر ‏اسپتالوں میں قیام سے محکمہ صحت پر پڑنے والے اضافی بوجھ کو کم کرنا ہے۔

مملکت میں کچھ ایسے کیسز سامنے آئے جس میں مختلف بہانوں کی وجہ سے مریض طویل مدت ‏سے موجود تھے انہیں اسپتالوں سے ڈسچارج کر دیا گیا تھا لیکن وہ مختلف وجوہات کی بناء پر ‏اسپتالوں میں موجود تھے۔

کویت: تارکین وطن کے لیے قانون میں اہم ترمیم

مریضوں کے اسپتال میں غیرضروری طور پر موجودگی سے سرکاری طبی عملے پر اضافی بوجھ تھا ‏جس سے کئی مسائل درپیش تھے۔

دوسری جانب کویت نے ریاست میں موجود اور کویت سے باہر پھنسے تارکینِ وطن کے لیے بیمہْ ‏صحت میں تبدیلی کر دی ہے۔

اسسٹنٹ انڈر سیکریٹری برائے رہائشی امور میجر جنرل انور عبد اللطیف البرجس نے بتایا کہ آرٹیکل ‏‏(18، 20 اور 22) کے طریقہ کار کے تحت آنے والے تارکینِ وطن کے لیے ہیلتھ انشورنس میں ترمیم ‏کی گئی ہے۔

ترمیم کے مطابق کویت میں موجود رہائشیوں اور کویت سے باہر پھنسے ہوئے رہائشیوں کے لیے ‏صحت انشورنس کی مدت مختلف ہوگی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں