قصور میں بچی کا قتل شریفوں کے اقتدار کے منہ پر طمانچہ ہے، بلاول بھٹوbilawal
The news is by your side.

Advertisement

قصور میں بچی کا قتل شریفوں کے اقتدار کے منہ پر طمانچہ ہے، بلاول بھٹو

کراچی : پیپلز پارٹی چیئرمین بلاول بھٹو کا کہنا ہے کہ قصور میں بچی کا قتل شریفوں کے اقتدار کےمنہ پر طمانچہ ہے، لگتا ہے پنجاب کے کچھ علاقے بچیوں کے لیے جہنم بنا دیے گئے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق چیئرمین پی پی بلاول بھٹو نے قصور میں بچی سے زیادتی کے بعد قتل کی مذمت کرتے ہوئے قصور میں بچی کا قتل شریفوں کےاقتدار کے منہ پر طمانچہ ہے، شریفوں کی حکومت ایسے وحشیانہ واقعات نظر انداز کرتی رہی۔

بلاول بھٹو کا کہنا ہے کہ قصور میں 10 اورشیخوپورہ میں ایسے11 واقعات ہوئے، لگتا ہے پنجاب کے کچھ علاقے بچیوں کے لیے جہنم بنا دیے گئے ہیں، شریفوں نے اپنے آپ کو ذمےداریوں سے بری الذمہ قرار دے رکھا ہے۔

پی پی چیئرمین نے کہا ہے کہ بچوں سے زیادتی اور قتل کےواقعات نے معاشرے کے ہلا دیا ہے، مجرموں سے شریفوں کا نرم رویہ برداشت نہیں کریں گے، بچوں سے زیادتی و قتل میں ملوث ملزمان کے خلاف کیس دائر کیے جائیں۔

انکا مزید کہنا تھا کہ بچوں کا تحفظ پیپلز پارٹی کی اولین ترجیحات میں شامل ہے، پیپلز پارٹی بچوں سے بربریت کےخلاف ہر فورم پر آواز اٹھائے گی۔

یاد رہے کہ قصور میں کمسن زینب کو پانچ روز پہلے اغوا کیا گیا تھا، جس کے بعد سفاک درندوں نے بچی کو زیادتی نشانہ بنا کر قتل کردیا ، واقعہ کیخلاف شہر میں شٹر ڈاون ہڑتال اور احتجاج کا سلسلہ جاری ہے، دکانیں،مارکیٹس ودیگرتجارتی مراکزبند ہیں۔

بچی کے اغوا کی سی سی ٹی وی فوٹیج بھی سامنے آگئی لیکن پولیس اب تک ملزم کو گرفتار نہ کرسکی۔


مزید پڑھیں: وزیر اعلیٰ پنجاب کا قصور میں 7 سالہ بچی کے قتل کا نوٹس


وزیراعلیٰ پنجاب شہبازشریف نے قصور میں آٹھ سال کی بچی کے قتل کا نوٹس لیتے ہوئے آئی جی پنجاب سے رپورٹ طلب کرلی اور ملزمان کی فوری گرفتاری کاحکم دیتے ہوئے ، آئی جی کوجائےوقوعہ پرپہنچنے کی ہدایت کی ہے۔

زینب کے والدین عمرےکی سعادت کے لئے سعودیہ عرب میں ہیں، اہل خانہ کےمطابق والدین کی عمرے سے آج واپسی پرزینب کی نمازجنازہ ادا کی جائے گی ۔

خیال رہے کہ گذشتہ ڈیڑھ سال کے دوران قصورمیں بچیوں کواغواکےبعدقتل کرنےکا یہ دسواں واقعہ ہے۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں