The news is by your side.

Advertisement

جتنے مرضی مقدمے بنالیں ، پوری پارٹی کوجیل بھیج دیں، سمجھوتہ نہیں کریں گے، بلاول بھٹو

غریب اور عوام دشمن بجٹ کیخلاف سڑکوں پر نکل رہے ہیں

لاہور : پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے کہا ہے کہ غریب اور عوام دشمن بجٹ کیخلاف سڑکوں پر نکل رہے ہیں، جتنے مرضی مقدمے بنا لیں اور سب کو جیل میں بھیج دیں، عوام کے حقوق پر سمجھوتہ نہیں کریں گے۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹو زرداری نے پارٹی رہنماء اسلم گل کے بھائی کی وفات پر تعزیت کے بعد میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا صوبوں کےحقوق اوروسائل پرڈاکاڈالاجارہاہے، معاشی حملےہورہےہیں یہ بڑی ناانصافی ہے، پرانے پاکستان میں پنجاب کا بجٹ600 بلین ہوتا تھا اب 230بلین ہے۔

بلاول بھٹو کا کہنا تھا پی ٹی آئی کےنئےپاکستان میں عوام سےناانصافی کی جارہی ہے، معاشی بحران کی وجہ سے4ملین پاکستانی غربت کی لکیر سے نیچے آچکے ہیں، پی ٹی آئی کی پالیسیاں ایسی ہی رہیں تومزیدلوگ غریب کی لکی رسے نیچےآئیں گے۔

پی پی چیئرمین نے کہا ملک کےوزیراعظم کوسفارتی آداب کابھی علم نہیں، چوروں اورڈاکوؤں کیلئےایمنسٹی اسکیمزلائی جاتی ہیں، پاکستان کے عوام ، کسانوں  اور مزدوروں کیلئےکوئی اسکیم نہیں۔

چوروں اورڈاکوؤں کیلئےایمنسٹی اسکیمز اور عوام ، کسانوں  اور مزدوروں کیلئےکوئی اسکیم نہیں

ان کا کہنا تھا  پاکستان کےعوام بہادرہیں،ہم سب مل کرملک کیلئےجدوجہدکریں گے ، پنجاب کانوجوان حکومت کی معاشی دہشت گردی کابوجھ اٹھائے گا،  معاشی صورتحال  پر  پیپلزپارٹی کاآوازبلندکرناحق ہے، عوام اور پیپلزپارٹی معاشی دہشت گردی برداشت نہیں کریں گے۔

عوام دشمن بجٹ ملک کی معاشی خودکشی ہے

بلاول بھٹو  نے کہا پہلےبھی کہاتھاعوام دشمن بجٹ پیش کیاگیاتوہم سڑکوں پرنکلیں گے، آصف زرداری کوبجٹ سےایک دن پہلےگرفتارکیاگیا، ہمارے پاس موقع  تھا آصف زرداری کی گرفتاری پرایوان کابائیکاٹ کرتے، عوام دشمن بجٹ ملک کی معاشی خودکشی ہے۔

چیئرمین پی پی کا کہنا تھا عمران خان نے کہا تھا آلیکن انہوں نے آئی ایم ایف کے پاس جا کر ساری عوام کو معاشی خودکشی پر مجبور کر دیا ہے۔ اس بجٹ کیخلاف آواز اٹھانا ہمارا فرض ہے۔ جتنے مرضی مقدمے بنا لیں اور سب کو جیل میں بھیج دیں لیکن پی پی عوام کے حقوق پر سمجھوتہ نہیں کرے گی۔

انھوں نے کہا کہ عمران خان نےکہاتھاوہ آئی ایم ایف کےپاس نہیں جائیں گے، لیکن انہوں نے آئی ایم ایف کے پاس جا کر ساری عوام کو معاشی خودکشی پر مجبور کر دیا ہے،  ملکی مسائل پرآوازاٹھاناہم سب کافرض ہے، عوام دشمن بجٹ کومستردکرتےہیں، آج ایک نہیں دوپاکستان ہیں اور ہم اس کےخلاف ہیں، ہم  نےہمیشہ جمہوری حقوق کیلئےجدوجہدکی ہے۔

عمران خان نے آئی ایم ایف کے پاس جا کر ساری عوام کو معاشی خودکشی پر مجبور کر دیا ہے

بلاول بھٹو کا کہنا تھا آج جمہوری حقوق پرحملےہورہےہیں توپی پی سمجھوتہ نہیں کرے گی ،  ہم نےہمیشہ جمہوری حقوق کیلئےجدوجہدکی ہے۔ جتنے  مرضی مقدمے بنا لیں  اور سب کو جیل میں بھیج دیں لیکن ہم اپنامؤقف نہیں بدلیں گے۔

پیپلز پارٹی کے چیئرمین نے کہا سب سے بڑے صوبے کے لئے سب سے نالائق وزیراعلی چنا، جسے ہاتھ ملانے کا نہیں پتہ وہ حکومت کیسے چلائے گا، پنجاب  کے بجٹ میں کٹوتی کابوجھ کون برداشت کرےگا، آمراورکٹھ پتلی عمران کےپاکستان میں فرق کیاہے؟۔

ان کا مزید کہنا تھا نئے پاکستان میں ہماراانسانی حقوق کاتحفظ نہیں ہے، ہم نےآصف زرداری کی گرفتاری کےباوجودانہیں موقع دیا، پاکستانیوں کومل کر جدوجہد کرنا پڑے گی، ملک کے مسائل کوئی ایک شخص حل نہیں کرسکتا، ہم سب مل کرملک کےمسائل کاحل نکال سکتےہیں ۔

بلاول بھٹو  نے کہا  سیاسی پارٹیوں،شخصیات پرپابندی نہیں ہونی چاہیے، پروڈکشن آرڈرنہ دےکرحلقےکےعوام کوبجٹ سیشن سےدوررکھاگیا، آئین اور قانون  کی بات کرتےہیں توپروڈکشن آرڈر ناگزیر ہوتے ہیں۔

غریب اور عوام دشمن بجٹ کیخلاف سڑکوں پر نکل رہے ہیں

پی پی چیئرمین کا کہنا تھا یہ فاشسٹ حکومت ہے جس کا وزیر کہتا ہے کہ حالات ٹھیک کرنے کے لئے 6 ہزار افراد کو پھانسی دے دو۔ حکومت نے اپوزیشن کیخلاف آپریشن شروع کیا ہے کیونکہ اسے علم ہے کہ آصف زرداری سب کو ایک پلیٹ فارم پر اکٹھے کر سکتے ہیں،  حکومت کا دباؤ نہ صرف ہم پر بلکہ تمام سیاسی جماعتوں پر ہے،  چیئرمین نیب نے ایک فقرہ کہہ دیا تو اس پر اور عدلیہ پر بھی دباؤ ڈال دیا گیا۔

انھوں نے کہا  مریم نواز نےآج صبح ہمیں دعوت دی،میں اسےقبول کروں گا، پاکستان کےبڑےمسائل ہیں،ہم سب کومل کران کاحل نکالناہے، ہم سب کو مل  کر عوام دشمن پی ٹی آئی کو نکالناہے، ملکی مفاد کیلئے حکومت سمیت سب کو مشورہ دیا، ساتھ چلنےکوتیارہوں۔

ہم سب کو مل  کر عوام دشمن پی ٹی آئی کو نکالناہے

بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ  کٹھ پتلی حکومت کے پاس مسائل کاحل نہیں، مل کر حل نکالنا ہوگا، عیدکے بعد عوامی رابطہ مہم چلانے کا فیصلہ کیاگیا تھا، کرپشن  کے الزامات صرف ہم پرہیں، چیئرمین نیب تو ان کا ہرحکم مانتے تھے پھر بھی ان کیخلاف بھی سازش کی گئی۔

جلدتمام جماعتوں کی اےپی سی ہوگی اورمستقبل کالائحہ عمل طےکیاجائے گا

انھوں نے مزید کہا جلدتمام جماعتوں کی اے پی سی ہوگی اورمستقبل کالائحہ عمل طےکیاجائے گا، ہم صرف یہ کہتےہیں پارلیمان کواپنی مدت پوری کرنی چاہیے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں