The news is by your side.

Advertisement

ریاست کوچیلنج کرنے اور ہتھیاراٹھانے والوں سے عسکری طورپرنمٹنا چاہیے، بلاول بھٹو

کراچی : پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹوزرداری نے کہا کہ ریاست کوچیلنج کرنے والوں سے عسکری طورپرنمٹنا چاہئیے، انتہاپسندی اور دہشت گردی  سے نمٹنے کےلئے وسیع حکمت عملی کی ضرورت ہے۔

تفصیلات کے مطابق پیپلز پارٹی کے چیئرمین بلاول بھٹوزرداری نے برطانوی نشریاتی ادارے کو انٹرویو دیتے ہوئے کہا کہ انتہاپسندی اور دہشتگردی سے نمٹنے کے لئے وسیع حکمت عملی کی ضرورت ہے، ریاست کو چیلنج کرنے اور  ہتھیار اٹھانے والوں سے عسکری طورپرنمٹنا چاہیئے۔

بلاول بھٹو کا کہنا تھا کہ ہمیں صرف دہشت گردی ہی نہیں انتہا پسندی کے خاتمے پر بھی توجہ دینی کی ضرورت ہے اور انتہاپسندی کے خاتمے کے لئے پولیس،عدلیہ،تعلیم اورنصاب میں اصلاحات کی ضرورت ہے۔

انھوں نے انٹرویو کے دوران کہا کہ پاکستان میں کسی حدتک تمام سیاسی جماعتیں خاندانی سیاست پرانحصارکرتی ہیں تاہم ہماری جماعت نے خاندانی سیاست کا راستہ اپنی مرضی سے نہیں چنا۔

ان کا کہنا تھا کہ نانا اور والدہ کا قتل نہ کیا جاتا تو نانا سیاستدان ہوتے اور  والدہ دفتر خارجہ ہوتیں  اور وہ خود ایک طالبعلم ہوتا۔

وزیراعظم بننے کے سوال پر پی پی چیئرمین کا کہنا تھا کہ وزیراعظم بننے کی خواہش نہیں ہے، اپنے نظریات اور مقاصد حاصل کرنے ہیں۔

مشرف کے حوالے سے بلاول کا کہنا تھا پرویزمشرف نے والدہ کودھمکی دی تھی جس کا گواہ عدالت میں پیش کیا گیا۔ مشرف واپس آکر عدالت میں الزامات کا سامنا کیوں نہیں کرتے۔


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کےلیے سوشل میڈیا پرشیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں