The news is by your side.

Advertisement

‘کے ٹو بوٹل نک سے علی سدپارہ اور ساتھیوں کی لاشیں لانے میں خطرہ ، ماہرین سے مشاورت جاری

اسکردو : پاکستانی کوہ پیما علی سدپارہ کے بیٹے ساجد سدپارہ نے دنیا کی دوسری بلند ترین چوٹی ‘کے ٹو’ سرکرلی، ساجد سدپارہ نے کہا کے ٹو بوٹل نک سے لاشوں کو لانے میں خطرہ ہے، لاشوں کونقصان پہنچائے بغیر لانے کافیصلہ فیملی ،ماہرین کی مشاورت سےہوگا۔

تفصیلات کے مطابق پاکستانی کوہ پیما علی سدپارہ کے بیٹے ساجد سدپارہ ، ایلیا سیکلے اور پسانگ شرپا نے دنیا کی دوسری بلند ترین چوٹی ‘کے ٹو’ سرکرلی۔

اس موقع پر ساجدسدپارہ نے سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر اپنے بیان میں کہا کہ حالیہ کچھ دن ہمارے لیے زیادہ خوش قسمت ثابت ہوئے، خوش قسمت ہیں کہ اپنےساتھیوں کی لاشیں ملی ہیں، لاشوں کو محفوظ مقام پر منتقل کررہے ہیں۔

پاکستانی کوہ پیما کا کہنا تھا کہ انتہائی تکنیکی،خطرناک ڈھلان کی وجہ سے واپسی میں مشکلات ہیں، میں نے آج صبح کے ٹو سر کرلیا ہے، کے ٹو بوٹل نک سے لاشوں کو لانے میں خطرہ ہے ، فیملی اورماہرین سے مشاورت کے بعد لاشوں کی واپسی کا کام ہوگا۔

ساجدسدپارہ نے مزید کہا کہ لاشوں کونقصان پہنچائے بغیر لانے کافیصلہ فیملی ،ماہرین کی مشاورت سےہوگا۔

خیال رہے دو روز قبل ذرائع کا کہنا تھا کہ کے ٹو بیس کیمپ کے قریب سے دو افراد کی لاشیں ملی ہیں اور یہ علی سدپارہ اور آئس لینڈ کے جان سنوری کی ہو سکتی ہیں، یہ دونوں لاشیں ایک دوسرے سے کافی فاصلے پر تھیں، لاشوں کی شناخت جاری ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں