The news is by your side.

Advertisement

سابق مفرور افغان صدر کے محافظ کا اشرف غنی سے متعلق سنسنی خیز انکشافات

کابل: سابق مفرور افغان صدر کے محافظ نے اشرف غنی سے متعلق سنسنی خیز انکشافات کر دیے ہیں۔

تفصیلات کے مطابق برطانوی اخبار کے صحافی نے ایک رپورٹ میں اشرف غنی کے سابق چیف باڈی گارڈ جنرل شریفی کے حوالے سے اہم انکشافات کیے ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ سابق مفرور افغان صدر کے محافظ بریگیڈیئر جنرل پیراز عطا شریفی نے اشرف غنی کے بھاگنے کی فوٹیج کا دعویٰ کیا ہے، جنرل شریفی نے کہا کہ اشرف غنی کی بھاگتے ہوئے سی سی ٹی وی فوٹیج موجود ہے۔

جنرل عطا شریفی طالبان کے آنے کے بعد جلال آباد میں ایک گھر کے تہ خانے میں چھپ گئے تھے، پانچ ماہ قبل یہ برطانیہ کے نہایت سینئر سولجر جنرل سر نک کارٹر کے ساتھ ایک کانفرنس میں ایک میز پر بیٹھے ہوئے تھے

ڈیلی میل کے مطابق جنرل شریفی کا یہ بھی کہنا ہے کہ اشرف غنی افغانستان سے لاکھوں نہیں شاید کروڑوں ڈالر لے کر بھاگے ہیں، انھوں نے جاتے ہوئے کہا کہ ان کے پاس اسلحہ ہے۔

طالبان حکومت کے اعلان پر اشرف غنی بول پڑے

طالبان کے کنٹرول کے بعد افغانستان سے بھاگتے وقت سابق صدر نے اسلحہ بھی ساتھ لے لیا تھا، جنرل شریفی نے دعویٰ کیا ہے کہ اشرف غنی نے انھیں بتایا کہ اگر طالبان نے انھیں پکڑنے کی کوشش کی تو وہ خود کو مار ڈالیں گے۔

یاد رہے کہ 8 ستمبر کو اشرف غنی نے فرار کے بعد اپنے ٹوئٹر اکاؤنٹ پر پہلی بار پیغام دیا، انھوں نے لکھا کہ کابل چھوڑنا میری زندگی کاسب سے مشکل فیصلہ تھا، میں نے صدارتی محل کی سیکیورٹی ٹیم ‏کے کہنے پر افغانستان چھوڑا، سیکیورٹی ٹیم نے کہا آپ نہیں نکلے تو سڑکوں پر خون خرابا ہوگا۔

اشرف غنی نے لکھا کہ اپنےلوگوں کو تنہا چھوڑنے کا کبھی کوئی ارادہ نہیں تھا، مجھ پر لاکھوں ڈالرز لے کر بھاگنے کے ‏الزامات بے بنیاد ہیں، کرپشن نے ہمارے ملک کی جڑیں کھوکھلی کر دی ہیں، بحیثیت صدر کرپشن کے خلاف جنگ میری ‏ترجیح تھی۔

Comments

یہ بھی پڑھیں