The news is by your side.

Advertisement

بریگزٹ ڈیل : یورپی یونین سے انخلا برطانوی حکومت کیلئے درد سر بن گیا

لندن : برطانوی وزیراعظم کی مشکلات میں کمی آئی اور نہ ہی بریگزٹ کا معاملہ حل ہوسکا، پارلیمان نے یورپی یونین سے ڈیل کا بل تو منظور کرلیا لیکن ایک بار پھر بریگزیٹ ٹائم ٹیبل مسترد کردیا گیا۔

تفصیلات کے مطابق برطانیہ کا یورپی یونین سے انخلا برطانوی حکومت کیلئے درد سر بن گیا۔ برطانوی پارلیمنٹ کا ایک اور گرما گرم اجلاس ہوا جس میں برطانوی پارلیمنٹ میں وزیراعظم بورس جانسن کی یورپی یونین سے انخلا کیلئے ڈیل پر ووٹنگ ہوئی، جس کوپارلیمنٹ نے منظور کرلیا۔

غیر ملکی خبر رساں ایجنسی کے مطابق دوسرے مرحلے میں برطانوی پارلیمنٹ نے بریگزٹ کے ٹائم ٹیبل کو مسترد کرتے ہوئےبریگزٹ کو بریک لگادیا۔

اراکین پارلیمنٹ نے کہا کہ ایک سو دس صفحات پر مشتمل معاہدے کا جائزہ لینے کیلئے تین روز کافی نہیں اس لئے بریگزٹ کی تاریخ کو اکتیس اکتوبرسے آگے بڑھایا جائے۔

خبر رساں ایجنسی کے مطابق پارلیمنٹ میں شکست کے بعد برطانوی وزیراعظم نے کہا ہے کہ اب مزید غیر یقینی کی صورتحال کاسامنا ہوگا۔ یورپی یونین کے صدر نے یورپی ممالک کے سربراہان سے برطانیہ کو مزید وقت دینے کی درخواست کی ہے۔

مزید پڑھیں : برطانیہ میں بریگزٹ کے خلاف غصے کا انوکھا اظہار

خیال رہے کہ گزشتہ روز برطانوی ممبران پارلیمنٹ نے بریگزٹ ڈیل کے فیصلے میں تاخیر کے حق میں ووٹ دیا تھا جبکہ وزیراعظم بورس جانسن کا کہنا تھا کہ بریگزٹ میں تاخیر پر یورپی یونین سے مزید کوئی بات نہیں ہوگی۔

واضح رہے کہ برطانیہ کو 2016 کے ریفرنڈم کے مطابق 29 مارچ کو یورپی یونین سے علیحدہ ہونا تھا تاہم ہاؤس آف کامنز کی جانب سے متعدد مرتبہ بریگزٹ معاہدے کی منسوخی کے باعث بریگزٹ میں 12 اپریل توسیع کی گئی تھی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں