The news is by your side.

Advertisement

وائٹ کالر کرائمز کیسز کو منطقی انجام تک پہنچانا اولین ترجیح ہے، چیئرمین نیب

اسلام آباد : چیئرمین نیب جاوید اقبال نے کہا ہے کہ نیب کو 2019 میں م53 ہزار 643 شکایات موصول ہوئیں جبکہ گزشتہ سال 42 ہزار 760 شکایات کو نمٹایا گیا۔

تفصیلات کے مطابق قومی احتساب بیورو (نیب) کے چیئرمین جسٹس ریٹائرڈ جاوید اقبال نے نیب کو موصول ہونے والی شکایات اور ان پر ہونے والی کارروائی سے متعلق کہا ہے کہ 2018 میں نیب کو 48 ہزار 591 شکایات موصول ہوئیں۔

ان کا کہنا تھا کہ 48 ہزار 591 میں سے 41 ہزار 414 شکایات کو نمٹایا گیا، شکایات میں اضافے سے نیب پر عوام کے اعتماد کا اظہار ہوتا ہے، نیب نے گزشتہ سال 1308 شکایات کی جانچ پڑتال کی۔

جاوید اقبال نے کہا کہ گزشتہ سال 1686 انکوائریز ،609 انویسٹی گیشن کو نمٹایا گیا، گزشتہ 2 سال میں 363 ارب روپے برآمد کرکے قومی خزانے میں جمع کرائے۔

چیئرمین نیب کا کہنا تھا کہ نیب کے مقدمات میں مجموعی سزا کی شرح 68.8 فیصد ہے، نیب نے قیام سے ابتک 466.069 ارب روپے قومی خزانے میں جمع کرائے، سینئرز کی دانش سے فائدہ اٹھانے کیلئے مشترکہ تحقیقاتی ٹیم کا نظام وضع کیا۔

انہوں نے کہا کہ نیب راولپنڈی میں فرانزک سائنس لیبارٹری قائم کی گئی، لیب میں ڈیجیٹل فرانزک، سوالیہ دستاویزات، فنگر پرنٹ تجزیئے کی سہولت ہے، نیب سارک اینٹی کرپشن فورم کا چیئرمین ہے، نیب سارک ممالک کیلئے رول ماڈل کی حیثیت رکھتا ہے۔

جسٹس (ر) جاوید اقبال کا کہنا تھا کہ چین کیساتھ سی پیک کے تناظر میں مفاہمت کی یادداشت پر دستخط کیے، بدعنوانی کے خاتمے کیلئے ایک دوسرے کے تجربات سے مستفید ہونے کا موقع ملے گا۔

چیئرمین نیب جاوید اقبال نے ہدایات کیں کہ ریجنل بیوروز ٹھوس شواہد، قانون کے مطابق شکایات کی جانچ پڑتال کریں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں