The news is by your side.

Advertisement

صارفین کا ڈیٹا چوری ہونے پر برٹش ایئرویز کو 36 ارب سے زائد کا جرمانہ

لندن : برطانوی انتظامیہ نے برٹش ایئرویز کو صارفین کا بینک ڈیٹا چوری ہونے پر 18 کروڑ 30 لاکھ پاؤنڈ (تقریباًساڑھے 36 ارب پاکستانی) کا جرمانہ عائد کردیا۔

تفصیلات کے مطابق انٹرنیشنل ایئرلائن گروپ کے ذیلی ادارے برٹش ایئر ویز کو برطانیہ کے انفارمیشن کمشنر آفس (آئی سی او) کی جانب سے تاریخ ساز جرمانہ کیا گیا ہے جس کی رقم 183 ملین پاؤنڈ ہے۔

انٹرنیشنل ایئرلائن گروپ کا کہنا ہے کہ انفارمیشن کمشنر آفس کی جانب سے برطانوی پروٹیکشن ایکٹ کے تحت جرمانہ عائد کیے جانے پر ’حیرانگی اور مایوسی ہوئی‘۔

برٹش ایئرویز کا کہنا ہے کہ ہیکرز کی جانب سے ان کی ویب سائٹس پر دشمنوں کی جانب سے بہت منظم انداز میں حملہ کیا گیا تھا۔

، برطانوی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ برٹش ایئرویز پر عائد کیا گیا جرمانہ سنہ 2017 کی سیل کا 1.5 فیصد ہے انٹرنیشنل ایئرلائن گروپ کے چیف ایگزیکٹو ویلّی والش نے کہا کہ وہ جرمانے کے خلاف اپیل اور فضائی کمپنی کی پوزیشن کا بہترین انداز میں دفاع کرنے کا سوچ رہے ہیں۔

متاثرہ فضائی کمپنی کے سی ای او سزا پرردعمل دیتے ہوئے کہا کہ ’ہمیں صارفین کے اکاؤنٹ کےساتھ چھیڑچھاڑ ہونے اکاؤنٹس لنک چوری ہونے کے بعد دھوکا دہی کا کوئی بھی ثبوت نہیں ملا ہے‘۔

ائیرلائن پر جرمانہ کرنے والے انفارمیشن کمشنر آفس نے اسے ایک بہت بڑا جرمانہ قرار دیتے ہوئے کہا کہ اس طرح کبھی کارروائی نہیں کی گئی اور نئے قوانین کے تحت پہلی مرتبہ اسے عام کیا گیا ہے۔

انفارمیشن کمشنر آفس کا مزید کہنا تھا کہ ہیکنگ کا واقعہ اس وقت پیش آیا جب برٹش ائیرویز کی ویب سائٹ استعمال کرنے والے صارفین کو ایک جعلی ویب سائٹ پر منتقل کیا گیا اور اس ویب سائٹ کے ذریعے ہیکرز نے تقریباً 5 لاکھ مسافروں کا ڈیٹا چرایا۔

چوری ہونے والی معلومات میں صارفین کے نام، پوستل ایڈریس، ای میل ایدڑیس اور کریڈٹ کارڈ کی معلومات شامل ہے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں