The news is by your side.

Advertisement

پاکستان آٹو مینو فیکچررز ایسوسی ایشن کی بجٹ تجاویز حکومت کو ارسال

پاکستان آٹو موٹیو مینو فیکچررز ایسوسی ایشن نے مالی سال 17-2016 کے وفاقی بجٹ سے متعلق تجاویز حکومت کو ارسال کردیں۔

پاکستان آٹو موٹیو مینوفیکچررز ایسوسی ایشن نے نئے مالی سال کے وفاقی بجٹ سے متعلق تجاویز میں آٹو سیکٹر پر عائد ایک فیصد اضافی ٹیکس، اسٹیل مصنوعات پر ریگولیٹری ڈیوٹی، برآمدات پر ود ہولڈنگ ٹیکس، ڈائز، ٹولز اور مشینری پر عائد ڈیوٹی اور موٹر سائیکل ڈیلرز کے سیلز ٹیکس ایڈجسٹمنٹ شامل ہیں۔

پاما نے کہا ہے کہ مختلف ایس آر اوز کے ذریعے اسٹیل مصنوعات پر ریگولیٹری ڈیوٹی عائد کی گئی ہے۔ ان کی وجہ سے مقامی کار کی لاگت میں 3000 سے 5000 روپے تک کے اضافے کا سامنا ہے۔ ایسوسی ایشن نے تجویز دی ہے کہ مذکورہ آئٹمز پر عائد ریگولیٹری ڈیوٹی ختم کی جائے۔ ایسوسی ایشن کے مطابق کسٹم ایکٹ 1969 کے پہلے شیڈول میں درج مصنوعات کی درآمد پر ایک فیصد اضافی کسٹم ڈیوٹی سے استثنیٰ دیا جائے۔

ایسوسی ایشن نے تجاویز میں کہا ہے کہ خام مال مشینری، پارٹس، ڈائز، مولڈز اور ٹولز پر 5 فیصد کسٹم ڈیوٹی ختم کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔ پاما نے موٹر سائیکل ڈیلرز اور ریٹیلرز کو بھی چھوٹ کی فہرست میں شامل کرنے کی تجویز دی گئی ہے۔

ایسوسی ایشن کے مطابق ایکسپورٹ آمدن پر ود ہولڈنگ ٹیکس کی شرح میں کمی کر کے پاکستانی مصنوعات کے لیے مسابقت اور برآمدی اہداف کو آسان بنانے میں مدد ملے گی۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں