The news is by your side.

Advertisement

دبئی بس حادثہ، عمانی ڈرائیور کو خون بہا کی ادائیگی کا حکم

عدالت نے 17 افراد کی موت کا سبب بننے والے بس ڈرائیور کو 34 لاکھ درہم خون بہا دینے کا حکم سنا دیا

ابوظبی : اماراتی عدالت نے جون کے اوائل میں دو پاکستانیوں سمیت 17 افراد کی موت کا باعث بننے والے عمانی ڈرائیور کو 34لاکھ درہم خون بہا دینے کا حکم سنا دیا۔

تفصیلات کے مطابق متحدہ عرب امارات کی ریاست دبئی کی میں 8 جون کو عمانی ڈرائیور کی غفلت اور دوسری شاہراہ پر تیز رفتار گاڑی چلانے کے باعث سیاحوں کی بس کو خوفناک ٹریف حادثہ پیش آیا تھا جس کے نتیجے میں 17 سیاحوں کی ہلاکت ہوئی تھی۔

اماراتی خبر رساں ادارے کا کہنا تھا کہ 53 سالہ عمانی ڈرائیور کو 17 افراد کی موت اور 13 افراد کے زخمی ہونے کا باعث بننے کے مقدمے میں دبئی کی ٹریفک کورٹ میں منتقل کیا گیا تھا۔

پراسیکیوٹر صالح الفالیصی نے الزام لگایا کہ ڈرائیور متعدد افراد کی موت اور زخمی ہونے کاسبب بنا ہے، پراسیکیوٹر نے عدالت نے درخواست کی عمانی شہری کو سات برس قید اور جرمانے کی سزا سنائی جائے، جس کے بعد عدالت نے ڈرائیور کو متاثرہ خاندانوں کو 34 لاکھ درہم خون بہا دینے کا حکم سنا یا ہے۔

یاد رہے کہ 8 جون کو متحدہ عرب امارات کی ریاست دبئی کے ضلع الراشدیہ میں عید کے چوتھے روز خوفناک ٹریفک حادثے کے نتیجے میں پاکستانی، بھارتی اور عمانی شہریوں سمیت 17 افراد ہلاک ہوئے تھے، حادثہ تیز رفتاری کے سبب پیش آیا تھا۔

رپورٹ کے مطابق حادثے میں جاں بحق ہونے والوں میں 12 کا تعلق پڑوسی ملک بھارت سے ہے جبکہ ہلاک ہونے والوں میں دو پاکستانی، ایک آئرش اور ایک عمانی شہری شامل ہے۔

ریسکیو ذرائع کے مطابق ایک تیز رفتار بس شیخ محمد بن زاید روڈ پر ایک سائن بورڈ سے ٹکرانے کے بعد حادثے کا شکار ہوگئی تھی، حادثے میں 17افراد ہلاک جبکہ3شدید زخمی ہوئے تھے،حادثے کے وقت بس میں 31 افر اد سوار تھے۔

لیفٹیننٹ کرنل عبداللہ السعودی کا کہنا تھا کہ گاڑی چلانے والی ڈرائیور نے غلط لین میں گاڑی چلائی اور ’40 کلومیٹر فی گھنٹہ کی رفتار سے گاڑی چلانے‘ کا سائن بورڈ اور وارننگ بورڈ بھی نظر کرتا ہوا تیز رفتاری سے آگے بڑھتا رہا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں