The news is by your side.

پاک فوج کے خلاف کوئی بات سننا نہیں چاہتے، تاجر برادری

کراچی : شہر قائد کی تاجر برادری پاک فوج کے شانہ بشانہ کھڑے رہنے کے عزم کا اعادہ کیا ہے، ان کا کہنا ہے کہ پاک فوج کے خلاف کوئی بات سننا نہیں چاہتے۔

تفصیلات کے مطابق کراچی کی تاجر برادری کے مرکزی رہنماؤں نے کہا ہے کہ ہم اپنی پاک فوج اور اداروں کے ساتھ کھڑے ہیں، پاک فوج کےخلاف کوئی بات سننا نہیں چاہتے۔

ان خیالات کا اظہار انہوں نے کراچی پریس کلب میں مشترکہ پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا، اس موقع پر سابق چیف سی پی ایل سی احمد چنائے، سابق نائب ناظم طارق حسن، زبیر طفیل، خالد تواب، شرجیل گوپلانی رضوان عرفان اور دیگر موجود تھے۔

احمد چنائے نے اپنے خطاب میں کہا کہ پاک فوج اور ملکی اداروں نے بڑھ چڑھ کر پاکستان کے عوام کی حفاظت اور ان کیلیے قربانیاں دی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ اداروں کو نقصان پہنچے گا تو ملک کی داخلی اور بیرونی صورتحال کو نقصان پہنچے گا، تمام سیاسی جماعتیں مل کرایک میز پر بیٹھ کر ملکی مسائل کا حل نکالیں۔

تاجر رہنما زبیر طفیل نے کہا کہ پاک فوج کو برا بھلا کہہ کر کسی کو کچھ حاصل نہیں ہوگا، تمام سیاسی جماعتیں مذاکرات کے ذریعے مسائل حل کریں۔،

صنعت کار خالد تواب کا کہنا تھا کہ فوج اندرونی اور بیرونی طور پر ملک کی حفاظت کرتی ہے، آج ملک میں بیرونی سرمایہ کاری صفر ہوگئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ حکومت اور اپوزیشن جماعتیں بیرونی سرمایہ کاری کا معاملہ پہلے حل کریں، میثاق معیشت پر تمام جماعتیں مل کر10سے15سال کے لیے دستخط کریں، تاجر برادری ہرطرح سے اپنی فوج کے لیے حاضر ہے۔

تاجررہنما شرجیل گوپلانی کا کہنا تھا کہ پاک فوج کے خلاف ہم کوئی بات سننے کو تیار نہیں ہیں، ہم پہلے بھی پاک فوج کے ساتھ تھے ہیں اور ہمیشہ رہیں گے۔

تاجررہنما رضوان عرفان نے کہا کہ پاک فوج ہماری ریڈ لائن ہے اسے کوئی کراس نہ کرے، 2013سے پاک فوج نے امن قائم کیا، چیف جسٹس ،عمران خان اور تمام سیاستدان مل کر ایک مشترکہ پالیسی بنائیں، اگر یہ سلسلہ ختم نہ ہوا تو احتجاج کی طرف جائیں گے۔

سابق نائب ناظم اور رہنما ق لیگ طارق حسن نے کہا کہ پاکستان مزید بحرانوں کا متحمل نہیں ہوسکتا ہم ملک کے مقروض ہیں، فوج اور آئی ایس آئی ڈیفنس لائن ہیں، انہوں نے قربانیاں دے کر ملک کو بچایا،۔

انہوں نے کہا کہ ہمیشہ فوج پر اور اداروں پر ہی تنقید نہیں کرنا چاہیے، میڈیا اور سوشل میڈیا پر پاک فوج کی تضحیک کی جارہی ہے، سیاسی مقاصد کے لیے پاکستان کو داؤ پرمت لگائیں۔

سابق نائب ناظم کا مزید کہنا تھا کہ ہم سب پر فرض ہے کہ اپنے ملک اور افواج کو مضبوط کریں، ایسے پروپیگنڈے کا حصہ نہ بنیں جس میں فوج اور آئی ایس آئی کی تضحیک ہو۔

Comments

یہ بھی پڑھیں