The news is by your side.

Advertisement

کابینہ میں شامل وزرا اور مشیران مقدمات میں ملوث نکلے

اسلام آباد: وفاقی کابینہ میں حلف اٹھانے والے کئی وزرا اور مشیران مقدمات میں ملوث نکلے ہیں۔ وفاقی وزرا اور مشیران مختلف مقدمات میں ضمانت پر ہیں۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق احسن اقبال نارروال اسپورٹس کمپلکس کیس میں ضمانت پر ہیں۔ وزیر توانائی شاہد خاقان عباسی ایل این جی کیس میں عدالت سے ضمانت پر ہیں۔

وزیر خزانہ مفتاح اسماعیل بھی ایل این جی کیس میں ضمانت پر ہیں۔ وفاقی وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ انسداد منشیات کیس میں ضمانت پر ہیں۔ وزیر آبی و سائل خورشید شاہ آمدن سے زائد اثاثہ جات کیس میں ضمانت پر ہیں۔

وزیر دفاع خواجہ آصف غیر قانونی اراضی کیس میں ضمانت پر ہیں۔ مشیر امیر مقام غیر قانونی ٹھیکے اور آمدن سے زائد اثاثہ کیس میں ضمانت پر ہیں۔

وزیر ریلوے سعد رفیق آمدن سے زائد اثاثہ جات اور ہاؤسنگ کیس میں ضمانت پر ہیں۔ وزیر صحت قادر پٹیل منی لانڈرنگ اور انسداد دہشت گردی مقدمات میں ضمانت پر ہیں۔

وفاقی وزیر جاوید لطیف لوگوں کو بغاوت کے لیے اکسانے کے مقدمے میں ضمانت پر ہیں۔

عدالتی فیصلے کے مطابق مقدمے میں ملوث شخص سپاہی بھی بھرتی نہیں ہو سکتا۔

خیال رہے کہ وزیر اعظم شہباز شریف کی چونتیس رکنی وفاقی کابینہ نےحلف اٹھا لیا ہے۔ قائم مقام صدر صادق سنجرانی نے اکتیس وفاقی وزرا اور تین وزرائے مملکت سے حلف لیا۔

کابینہ میں مسلم لیگ (ن) کے چودہ، پیپلزپارٹی گیارہ، جے یو آئی اے کے چار اور ایم کیو ایم کے حصہ میں دو اور مسلم لیگ ق جمہوری وطن پارٹی اور بلوچستان عوامی پارٹی کے حصے میں ایک ایک وزارت آئی۔

وفاقی وزیر کا حلف اٹھانے والوں میں خواجہ آصف، احسن اقبال ، رانا ثنا اللہ، ایاز صادق ، رانا تنویر، خرم دستگیر، مریم اورنگزیب، سعد رفیق ، جاوید لطیف، ریاض حسین پیرزادہ ، مرتضیٰ جاوید عباسی، اعظم نذیر تارڑ، خورشید شاہ شامل ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں