The news is by your side.

Advertisement

شاہی قلعے میں کار ڈرفٹنگ ایونٹ، اے آر وائی نیوز کی خبر پر وزیراعلیٰ کا نوٹس

لاہور والڈ سٹی نے تاریخی شاہی قلعے میں کارڈرفٹنگ ایونٹ کرادیا معاملہ اے آر وائی نیوز پر آنے کے بعد وزیراعلیٰ پنجاب نے نوٹس لے لیا۔

 مغل دور حکومت کی انمول نشانی، عالمی ثقافتی سیاحتی مقامی شاہی قلعہ لاہور جہاں کبھی گھوڑے دلکی چال چلتے تھے وہاں اب اسپورٹس کاروں نے بھرے فراٹے۔

متعلقہ حکام کی مبینہ غفلت کے باعث تاریخی شاہی قلعے میں اس سے پہلے بھی کئی بار شادیاں بھی منعقد ہوچکی ہیں، نجی کمپنیوں نے فوٹو شوٹ بھی کیے ہیں لیکن اس بار تو حیرت انگیز طور پر خطرناک کارڈرفٹنگ ایونٹ کرادیا گیا۔

گزشتہ روز شاہی قلعے میں ہر طرف اسپورٹس کاریں خطرناک انداز میں فراٹے بھرتی رہیں۔

اے آر وائی نیوز کے مطابق گزشتہ روز تاریخی شاہی قلعے میں کارڈرفٹنگ ایونٹ کرایا گیا جہاں اسپورٹس کاروں کی خطرناک ریس کے دوران کئی بار حادثہ پیش آتے آتے رہ گیا۔

ذرائع کے مطابق اس ایونٹ کے لیے کمشنر لاہور نے لاہور والڈ سٹی انتظامیہ سے اجازت لی تھی، کارڈرفٹنگ کے دوران نجی کمپنی نے بھی اپنی اشتہاری فلم کی شوٹنگ کی۔

 

اس حوالے سے ڈی جی لاہور والڈ سٹی اتھارٹی کامران لاشاری نے اے آر وائی نیوز سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ انہیں شاہی قلعے میں کارڈرفٹنگ کا نہیں بتایا گیا تھا۔

کامران لاشاری کے مطابق کمشنر لاہور کی جانب سے ہم سے یہاں ایک پروگرام کی اجازت مانگی گئی تھی جو ہم نے دے دی، جیسے ہی کارڈرفٹنگ کے ایونٹ کا معلوم ہوا تو ہم نے ایونٹ کو رکوا دیا ہے۔

ڈی جی لاہور والڈ سٹی اتھارٹی نے یہ حیران کن بات بھی کہی کہ انہوں نے کبھی کارڈرفٹنگ نہیں دیکھی اور نہ ہی انہیں پتہ ہے کہ کارڈرفٹنگ کس بلا کا نام ہے؟

ان کا کہنا تھا کہ وہ اس حوالے سے ذمے داروں کے خلاف کارروائی کریں گے۔

دوسری جانب شاہی قلعے میں کارڈرفٹنگ کا معاملہ اے آر وائی نیوز پر اٹھائے جانے کے بعد وزیراعلیٰ پنجاب سے اس کا نوٹس لے لیا ہے۔

وزیراعلیٰ عثمان بزدار نے ڈی جی والڈ سٹی اتھارٹی سے رپورٹ طلب کرتے ہوئے کارڈرفٹنگ کی اجازت دینے کی تحقیقات کا بھی حکم دیا ہے۔

انہوں نے کہا ہے کہ تاریخی ورثے میں ایسے ایونٹ ناقابل برداشت ہیں اور اجازت دینے والے افسران کیخلاف تادیبی کارروائی کی جائے۔

Comments

یہ بھی پڑھیں