The news is by your side.

Advertisement

سعودی عرب: پانچویں مردم شماری رواں سال ہوگی

ریاض: سعودی عرب میں پانچویں مردم شماری رواں سال 2022 میں ہوگی جس کی بنیاد پر نئی ترقیاتی اسکیموں، پالیسیوں اور بجٹ کا تعین ہوگا۔

سعودی ویب سائٹ کے مطابق سعودی محکمہ شماریات نے کہا ہے کہ مملکت کی تاریخ میں پانچویں مردم شماری رواں سال 2022 کے دوران ہوگی، اس حوالے سے تیاریاں تیز کردی گئی ہیں۔

مملکت میں پہلی بار جدید ٹیکنالوجی کی مدد سے مردم اور مکان شماری کی جائے گی۔

محکمہ شماریات کا کہنا ہے کہ مردم اور مکان شماری کا کام آئندہ چند ماہ کے دوران انجام دیا جائے گا، نتائج کی بنیاد پر ترقیاتی اسکیمیںم رفاہ عامہ کی پالیسی اور بجٹ کی تقسیم کے اصول و ضوابط متعین ہوں گے۔

محکمہ شماریات کے مطابق مکانات سے متعلق معلومات جمع کی جائیں گی اور ان کی درجہ بندی ہوگی۔

مملکت کے اندر اور باہر موجود تمام سعودی شہریوں کے اعداد و شمار کا ریکارڈ تیار کیا جائے گا، ہر شہری کا نام، عمر اور اس کی سماجی و معاشی حالت بھی دریافت کی جائے گی۔

مردم و مکان شماری کے نتائج سرکاری و نجی اداروں کو مہیا کیے جائیں گے تاکہ آئندہ برسوں کے دوران سرکاری اور پرائیوٹ سیکٹر کے متعلقہ ادارے معتبر معلومات کے تناظر میں اپنی اسکیمیں اور پروگرام ترتیب دے سکیں۔

سنہ 2022 کے دوران سعودی عرب میں ہونے والی مردم شماری مملکت کی تاریخ کی پانچویں ہوگی۔

سب سے پہلے مردم شماری 1947 میں ہوئی تھی، دوسری 1992، تیسری 2004 اور چوتھی 2010 میں کی گئی تھی۔

آخری مردم شماری میں مملکت کی کل آبادی 2 کروڑ 71 لاکھ 36 ہزار 977 ریکارڈ پر آئی تھی، حالیہ 10 برسوں کے دوران مملکت میں بڑی تبدیلیاں آچکی ہیں، جن میںٹیکنالوجی کے حوالے سے اور سماجی و معاشی تبدیلیاں شامل ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں