site
stats
پاکستان

اعلیٰ عدلیہ کونشانہ بنانانوازشریف اورپارٹی کےحق میں نہیں،چوہدری نثار

اسلام آباد : ن لیگ کے رہنما اور سابق وزیر داخلہ چوہدری نثار کا کہنا ہے اعلیٰ عدلیہ کونشانہ بنانانوازشریف اورپارٹی کے حق میں نہیں، ریاستی اداروں پر تنقید غیرضروری ہے، وزارت واپس اس لیے نہیں کی تھی کہ اختلاف تھا۔

تفصیلات کے مطابق سابق وزیر داخلہ چوہدری نثار کا اپنے بیان میں کہنا ہے کہ اعلیٰ عدلیہ کونشانہ بنانانوازشریف اورپارٹی کےحق میں نہیں، ریاستی اداروں پرتنقیدغیرضروری ہے، نوازشریف اورمیں نےپارٹی کی ایک ایک اینٹ رکھی تھی، آج پارٹی کی اینٹیں رکھنے والا کوئی نہیں۔

رہنما ن لیگ کا کہنا تھا کہ وزارت واپس اس لیے نہیں کی تھی کہ اختلاف تھا، میں نےوزارت ٹھکراکراختلاف رائےکیا یہاں سیاست نہیں کی جاتی الزامات لگائےجاتےہیں ،عوام دونمبرلوگوں کوہرگزووٹ نہ دیں۔

سابق وزیرداخلہ مخالفین کواپنی سیاست پرتوجہ دینی چاہیے، نوازشریف کیخلاف مقدمات سپریم کورٹ میں ہیں۔

چوہدری نثار نے شیخ رشید پر تنقید کرتے ہوئے کہا کہ شیخ رشید اپنی سیاست کریں، مجھے میری کرنے دیں، شیخ رشید کسی غلط فہمی میں نہ رہیں، میں ان کے مشرف اور دیگر ادوار کے سیاسی اوراق کھول سکتا ہوں۔


مزید پڑھیں : عدلیہ سے محاذآرائی ملک، اداروں اور نواز شریف کیلئےٹھیک نہیں ہے،چوہدری نثار


یاد رہے کہ اس سے قبل بھی سابق وفاقی وزیر داخلہ چوہدری نثار نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہا تھا کہ عدلیہ سے محاذآرائی ملک، اداروں اور نواز شریف کیلئے ٹھیک نہیں ہے، سپریم کورٹ کےفیصلےپرعمل کرناچاہیے محاذآرائی نہیں۔

سابق وزیر داخلہ کا کہنا تھا کہ جس پارٹی کےساتھ کھڑاہوں ان کےساتھ ہی چلوں گا، کوشش کروں گاپارٹی کےجومفادمیں ہےاس کی رائےدوں، بہت اونچ نیچ آئی لیکن ساری عمرایک ہی پارٹی کےساتھ کھڑارہا، پارٹی میں خوشامدی گروپ کے خلاف ہوں، سب سے پہلے مسلمان، پھر پاکستانی اور پھر سیاستدان ہوں۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی وال پر شیئر کریں۔

Print Friendly, PDF & Email
20

Comments

comments

اس ویب سائیٹ پر موجود تمام تحریری مواد کے جملہ حقوق@2018 اے آروائی نیوز کے نام محفوظ ہیں

To Top