کسی کی خوشی کے لیے یا دباؤ میں آکر فیصلہ نہیں کرتے، چیف جسٹس ARYNews.tv
The news is by your side.

Advertisement

کسی کی خوشی کے لیے یا دباؤ میں آکر فیصلہ نہیں کرتے، چیف جسٹس

لاہور: چیف جسٹس آف پاکستان انور ظہیر جمالی نے کہا ہے کہ آئین میں ہر ادارے کی حدود متعین ہیں، کوئی ادارہ دوسرے کے معاملات میں مداخلت نہیں کرسکتا ،کرپشن ایک زہر ہے، کرپٹ افراد کو سخت ترین سزاملنی چاہیے۔

چیف جسٹس آف پاکستان انور ظہیر جمالی لاہور ہائی کورٹ کی 150  سالہ تقریبات سے خطاب کر رہے تھے، انہوں نے کہا کہ ہمیں جنگی بنیادوں پر معاشرتی برائیوں کے خلاف جدوجہد کرنی ہو گی، کرپشن کی وجہ سے آج حالات ناگفتہ بہ ہو چکے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان میں عدلیہ آزاد ہے کسی کی خوشی کے لیے یا دباؤ میں آ کر فیصلے نہیں کرتے بلکہ کیس کو میرٹ پر پرکھا جاتا ہے اور تمام قانونی تقاضے پورے کیے جاتے ہیں۔

قبل ازیں چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ منصور علی شاہ نے کہا کہ عدلیہ کا کام عوام کو انصاف دینا ہے سائل کو اس سے کوئی غرض نہیں ہے کہ بینچ اور بار کا آپس میں کیا تنازع ہے؟ عوام کو تو صرف انصاف چاہیے۔

واضح رہے کہ تقریب سے نامزد چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار، اٹارنی جنرل سمیت سینیئر ججز اور سینیئر وکلا نے بھی خطاب کیا۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں