ہمیں باہمی تعاون سے دہشت گردی جیسے مسائل کا حل نکالنا ہے: چیف جسٹس -
The news is by your side.

Advertisement

ہمیں باہمی تعاون سے دہشت گردی جیسے مسائل کا حل نکالنا ہے: چیف جسٹس

منصف اعلیٰ کا شنگھائی تعاون تنظیم کی کانفرنس میں خطاب

بیجنگ: چیف جسٹس آف پاکستان میاں ثاقب نثار نے کہا ہے کہ ہمیں باہمی تعاون سے دہشت گردی، انتہا پسندی جیسے مسائل کا حل نکالنا ہے.

ان خیالات کا اظہار انھوں نے شنگھائی تعاون تنظیم (SCO) کے ارکان ممالک کے سپریم کورٹس کی 13 ویں کانفرنس کے موقع پر خطاب کرتے ہوئے کیا.

دہشت گردی کے خلاف رکن ممالک کی عدلیہ کو کردارادا کرنا ہوگا، ہمیں باہمی تعاون سے دہشت گردی، انتہا پسندی جیسے مسائل کا حل نکالنا ہے

چیف جسٹس آف پاکستان

چیف جسٹس میاں ثاقب نثارکا کہنا تھا کہ شنگھائی تعاون تنظیم رکن ممالک کے لئے سیکیورٹی خطرہ ہے، دہشت گردی کی کوئی سرحد نہیں ہوتی، اس سنگین مسئلے سے نمٹنے کے لیے ہمیں‌ مل کر عہد کرنا ہوگا.

چیف جسٹس میاں ثاقب نثار کا کہنا تھا کہ ہمیں دہشت گردوں کے لئے جگہ تنگ کرنا ہوگی، مشترکہ پالیسی، قوانین، معلومات کا تبادلہ ہمارا ہتھیار ہے.

چیف جسٹس آف پاکستان کا کہنا تھا کہ دہشت گردی کے خلاف رکن ممالک کی عدلیہ کو کردارادا کرنا ہوگا، ہمیں باہمی تعاون سے دہشت گردی، انتہا پسندی جیسے مسائل کا حل نکالنا ہے.

یاد رہے کہ شنگھائی تعاون تنظیم ایک یوریشیائی سیاسی، اقتصادی اور عسکری تعاون تنظیم ہے، جسے شنگھائی میں سنہ 2001ء میں چین، قازقستان، کرغیزستان، روس، تاجکستان اور ازبکستان کے رہنماؤں نے قائم کیا۔ 2015 میں پاکستان اس تنظیم میں‌ شامل ہوا.


چیف جسٹس ثاقب نثار نے 12 مئی کیس کی فائل طلب کرلی


خبر کے بارے میں اپنی رائے کا اظہار کمنٹس میں کریں، مذکورہ معلومات کو زیادہ سے زیادہ لوگوں تک پہنچانے کے لیے سوشل میڈیا پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں