The news is by your side.

Advertisement

کیا چینی طیارے کو جان بوجھ کر نیچے گرایا گیا تھا؟ حقائق جانئے

بیجنگ: رواں سال مارچ میں گر کر تباہ ہونے والے چینی جیٹ طیارے سے متعلق چونکا دینے والا انکشاف ہوا ہے۔

غیر ملکی میڈیا رپورٹ کے مطابق حادثہ کا شکار ہونے والے چینی طیارے کے بلیک باکس کے ڈیٹا سے پتہ چلتا ہے کہ طیارے کے ساتھ جان بوجھ کر چھیڑ چھاڑ کی گئی اور طیارے کو اونچائی سے اچانک نیچے لایا گیا جو حادثے کا سبب بنا۔

وال اسٹریٹ جرنل نے چائنا ایسٹرن ایئر لائنز کے تباہ شدہ طیارے کے بلیک باکس کے فلائٹ ڈیٹا کی طرف اشارہ کیا جو مارچ میں گر کر تباہ ہوا تھا، امریکی حکام کے ابتدائی جائزے سے واقف لوگوں کا حوالہ دیتے ہوئے بتایا گیا کہ کسی نے جان بوجھ کر طیارے کو تباہ کیا تھا۔

غیر ملکی میڈیا رپورٹ کے مطابق ابتدائی تحقیقات میں تکنیکی خرابی کے کوئی آثار نہ ملنے کے بعد عملے کے اقدامات پر توجہ مرکوز کی گئی، بلیک باکس کے ڈیٹا سے پتہ چلتا ہے کہ طیارے کے ساتھ جان بوجھ کر چھیڑ چھاڑ کی گئی اور طیارے کو اونچائی سے نیچے لاکر تباہ کیا گیا۔

یہ بھی پڑھیں: چین: دوران ٹیک آف مسافر طیارے کو بڑا حادثہ پیش آ گیا (ویڈیو)

تاہم ابھی تک جیٹ بنانے والی بوئنگ کمپنی نے اس پر کوئی تبصرہ نہیں کیا ہے جبکہ یو ایس نیشنل ٹرانسپورٹیشن سیفٹی بورڈ (این ٹی ایس بی) نے بھی فوری طور پر کوئی تبصرہ دینے سے گریز کیا ہے۔

یاد رہے کہ رواں سال مارچ میں چین کے جنوب مغربی حصے میں بوئنگ 737-800 جیٹ طیارہ گوانگسی کے پہاڑوں میں گر کر تباہ ہو گیا تھا، طیارہ اچانک بلندی سے نیچے گرنے کے بعد حادثے کا شکار ہوا تھا اور اس میں سوار تمام ایک سو تئیس مسافر اور عملے کے نو ارکان ہلاک ہو گئے تھے، یہ اٹھائیس سالوں میں چین کا سب سے خطرناک فضائی حادثہ تھا۔

اپریل کے وسط میں چائنا ایسٹرن ایئر لائنز نے 737-800 پرواز کا دوبارہ استعمال شروع کردیا تاہم ماہرین کے مطابق گزشتہ ماہ حادثے کی ابتدائی رپورٹ کے خلاصے میں چینی ریگولیٹرز نے 737-800 پر کسی تکنیکی خرابی کی نشاندہی نہیں کی یہ سوال ابھی باقی ہے کہ مارچ میں طیارہ گرانے کی سازش کس کے کہنے پر کی گئی؟

Comments

یہ بھی پڑھیں