The news is by your side.

Advertisement

چین کی بڑی کامیابی، فوج کے لیے کرونا ویکسین استعمال کرنے کی منظوری

کانسینو ویکسین کلینیکل ٹرائلز کے دو مراحل میں کرونا وائرس سے ہونے والی بیماری سے بچاؤ میں مؤثر ثابت ہوئی

بیجنگ: چین نے پہلی کرونا ویکسین کی تیاری کے سلسلے میں بڑی کامیابی حاصل کر لی ہے، کرونا وائرس سے ہونے والے انفیکشن سے بچانے کی صلاحیت کی حامل ویکسین چینی فوج استعمال کرے گی۔

غیر ملکی میڈیا کے مطابق چینی فوج کو ایک کرونا ویکسین استعمال کرنے کا اشارہ مل گیا ہے، یہ ویکسین ملٹری ریسرچ یونٹ اور کانسینو بائیولوجکس نے تیار کی ہے، گزشتہ روز کمپنی نے بتایا کہ یہ ویکسین کلینیکل ٹرائلز کے بعد محفوظ اور کچھ مؤثر ثابت ہوئی ہے۔

Ad5-nCoV نامی یہ ویکسین چین کی ان 8 عدد ویکسینز میں سے ایک ہے، جن کی چین کے اندر اور باہر دیگر ممالک میں انسانوں پر آزمائش کی اجازت دی جا چکی ہے، اس ویکسین کی کینیڈا میں بھی ہیومن ٹیسٹنگ کی اجازت مل چکی ہے۔

کانسینو کمپنی نے اپنے بیان میں کہا کہ چین کے سینٹرل ملٹری کمیشن نے 25 جون کو ملٹری کے لیے اس ویکسین کے استعمال کی ایک سال کے لیے منظوری دی ہے۔ یہ ویکسین کانسینو اور اکیڈمی آف ملٹری سائنس (AMS) کے ریسرچ انسٹی ٹیوٹ نے تیار کی۔

چینی ماہرین نے کرونا اموات میں کمی کی دوا تلاش کر لی

اس ویکسین کو فی الوقت فوج کے استعمال ہی تک محدود رکھا گیا ہے، کانسینو کا کہنا تھا کہ لاجسٹکس سپورٹ ڈیپارٹمنٹ کی منظوری کے بغیر اس کا وسیع سطح پر استعمال نہیں کیا جائے گا۔

کانسینو کمپنی نے یہ بتانے سے انکار کر دیا ہے کہ آیا اس ویکسین کا انجکشن لگایا جانا لازمی ہوگا یا اختیاری، غیر ملکی میڈیا کو کمپنی نے بتایا کہ یہ فی الحال تجارتی راز ہے۔

اس ویکسین کے لیے فوجی منظوری اس ماہ کے شروع میں چین کے اس فیصلے کے بعد آئی ہے جس کے تحت بیرون ملک سفر کرنے والی سرکاری کمپنیوں کے ملازمین کو 2 دیگر ویکسینز کی پیش کش کی جا چکی ہے۔

کمپنی کا کہنا تھا کہ ویکسین کے کلینیکل تجربات کے بعد یہ بات تو سامنے آئی ہے کہ یہ کرونا وائرس کی بیماری سے بچاؤ کرنے کی صلاحیت رکھتی ہے، جس نے اب تک 5 لاکھ سے زائد لوگوں کو مار دیا ہے، تاہم اس کی تجارتی کامیابی کی ضمانت نہیں دی جا سکتی۔

واضح رہے کہ تاحال کوئی ایسی ویکسین نہیں ہے، کرونا وائرس سے ہونے والی بیماری کے خلاف جس کے کاروباری استعمال کی منظوری دی گئی ہو، تاہم دنیا بھر میں اس وقت 100 سے زائد ویکسینز کے انسانوں پر تجربات جاری ہیں۔

Comments

یہ بھی پڑھیں