The news is by your side.

Advertisement

چین کے ’برفانی لڑکے‘ کی دیرینہ خواہش پوری ہوگئی

چین کے برف سے ڈھکے گاؤں میں ایک 8 سالہ بچے کی ایک عجیب و غریب تصویر انٹرنیٹ پر وائرل ہوگئی اور اسی تصویر کی وجہ سے بچے کی دیرینہ خواہش پوری ہوگئی۔

چین کے جنوب مغربی صوبے یونن کے رہائشی 8 سالہ وانگ فومین کی ایک تصویر نے چینیوں کو حیرت زدہ کردیا جس میں وہ بالکل ایک ’برفانی لڑکا‘ دکھائی دے رہا ہے۔

تصویر میں 8 سالہ فومین کے بال اور بھوویں برف سے ڈھکی ہوئی ہیں جبکہ اس کی جلد بھی نہایت سرخ ہورہی ہے۔

دراصل 8 سالہ فومین ایک چھوٹے سے پسماندہ گاؤں کا رہائشی ہے جہاں واقع واحد اسکول میں تعلیم حاصل کرنے کے لیے اسے ڈیڑھ گھنٹے کا دشوار راستہ طے کرنا پڑتا ہے۔

اس پہاڑی گاؤں میں درجہ حرارت منفی 8 ڈگری سینٹی گریڈ ہوتا ہے اور ڈیڑھ گھنٹہ پیدل چلنے کے بعد جب وہ اسکول پہنچتا ہے تو اس کے بال، بھوویں اور معمولی پتلا سا کوٹ برف سے ڈھکا ہوا ہوتا ہے۔

انٹرنیٹ پر فومین کی تصویر وائرل ہونے کے بعد کئی اخباری نمائندگان اس کا انٹرویو لینے اس پہاڑی گاؤں میں آ پہنچے۔ ایسے ہی ایک انٹرویو کے دوران فومین نے اپنی خواہش کا اظہار کیا کہ وہ دارالحکومت بیجنگ جانا چاہتا ہے اور پولیس کا حصہ بننا چاہتا ہے تاکہ لوگوں کی خدمت کرسکے۔

اس کے اس انٹرویو کے فوراً بعد اسے بیجنگ کے پولیس ٹریننگ سینٹر کے دورے کی دعوت دی گئی جہاں وہ اپنے والد کے ساتھ پہنچا۔

پورے چین کے لوگوں  نے اس بچے کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کیا اور اسے امداد بھیجنی شروع کردی تاکہ وہ اپنی تعلیم مکمل کرسکے۔

فومین کے والد کو بیجنگ میں ہی ایک ملازمت اور گھر بھی فراہم کردیا گیا۔

یہی نہیں چین کی یوتھ ڈویلپمنٹ فاؤنڈیشن نے پسماندہ علاقوں میں رہنے والے بچوں کی تعلیم کے لیے عطیے کی مہم بھی شروع کردی جسے اب تک 15 سو 50 ڈالرز کے عطیات دیے جاچکے ہیں اور ان میں مزید اضافہ جاری ہے۔

یوں اس 8 سالہ بچے کی یہ تصویر ہزاروں غریب بچوں کی تعلیم کا وسیلہ بن گئی۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں