The news is by your side.

Advertisement

لکڑہارا اور شیر (چینی لوک کہانی)

دوستو! کئی سال پہلے ایک گاؤں میں کوئی لکڑہارا اپنے کنبے کے ساتھ رہتا تھا۔ وہ روز صبح سویرے اٹھتا اور لکڑیاں کاٹنے کے لیے جنگل کی طرف نکل جاتا۔

اس کی گزر بسر اور معاش کا ذریعہ یہی لکڑیاں تھیں جنھیں جنگل سے لاکر شہر میں فروخت کرکے ان کے دام وصول کرلیتا تھا۔ کسی طرح تنگی ترشی سے اس کا گھر چل رہا تھا، لیکن اس کی بیوی نہایت تنک مزاج اور بدخُو تھی۔ اس کی زبان پر ہر وقت شکوہ رہتا۔

ایک عجیب بات یہ ہوئی کہ لکڑہارے کی جنگل کے ایک شیر سے دوستی ہو گئی۔ شیر جیسا درندہ اسے لکڑیاں چننے میں مدد دینے لگا تھا۔ لکڑہارا بے تکلفی سے اس کے ساتھ اپنے دل کی باتیں بھی کرنے لگا تھا۔

ایک دن لکڑہارے نے اس کا ذکر اپنی بیوی سے کیا اور کہا کہ میں اپنے دوست کو کسی دن اپنے گھر بلانا چاہتا ہوں۔ بیوی بہت چیخی چلائی کہ بھلا درندے اور انسان کی کیسی دوستی؟ لکڑہارے کے سمجھانے پر وہ خاموش تو ہو گئی، لیکن اندر سے بہت خوف زدہ تھی۔ ایک دن موقع مناسب جان کر لکڑہارا شیر کو گھر لے آیا۔ بیوی نے شیر کو دیکھتے ہی چلّانا شروع کر دیا اور خوب برا بھلا کہا۔

اپنے دوست کی بیوی کے منہ سے ایسی باتیں سن کر شیر کو بہت دکھ ہوا اور اس نے لکڑہارے سے جو بہت شرمندگی محسوس کر رہا تھا، کہا کوئی بات نہیں، بس تم ایسا کرو کہ اپنے کلہاڑے سے میرے سَر پر ایک ضرب لگا دو۔ لکڑہارے نے کہا میں اپنے دوست کے ساتھ ایسا کیسے کر سکتا ہوں؟ جب شیر نے زیادہ اصرار کیا، تو اس نے شیر کے سر پر ضرب لگا دی، جس سے خون کا فوارہ جاری ہو گیا اور شیر واپس جنگل چلا گیا۔

لکڑہارا کئی دن تک خوف و ندامت کے باعث جنگل نہ گیا۔ گھر میں‌ نوبت فاقوں تک آگئی تو بھوک سے مجبور ہو کر ڈرتے ڈرتے جنگل کا رخ کیا۔ ابھی وہ درخت پر چڑھ کر لکڑیاں کاٹ ہی رہا تھا کہ دُور سے شیر آتا نظر آیا۔ خوف کے مارے اس کا برا حال ہو گیا۔

شیر عین اس درخت کے نیچے آن کھڑا ہوا اور لکڑہارے سے کہا کہ گھبراؤ نہیں۔ ہم اب بھی دوست ہیں۔ تم ذرا نیچے آؤ۔ لکڑہارا ڈرتے ڈرتے درخت سے نیچے اترا۔ شیر نے کہا تم میرے سَر کے بال اٹھا کر دیکھو وہ زخم تازہ ہے یا پھر بَھر چکا ہے؟ لکڑہارے نے ہچکچاتے ہوئے اس جگہ کو دیکھا اور بتایا کہ زخم کا تو نشان تک نہیں ہے۔ شیر نے اس کی طرف دیکھا اور کہا، لیکن میرے دوست تمھاری بیوی کی باتوں سے جو گھاؤ میرے دل پر لگا ہے، وہ اب بھی تازہ ہے۔

اس کہانی سے سبق ملتا ہے کہ ہمیں ایسی بات نہیں کہنی چاہیے جس سے کسی کی دل آزاری ہوتی ہو۔

Comments

یہ بھی پڑھیں