The news is by your side.

Advertisement

سانحہ کرائسٹ چرچ شہداء کے اہلخانہ سعودی بادشاہ کی دعوت پر مکہ مکرمہ پہنچ گئے

ریاض : کرائسٹ چرچ میں دہشت گردی کا نشانہ بننے والے متاثرہ افراد کے اہل خانہ خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز کی دعوت پر فریضہ حج کی ادائیگی کے لیے مکہ مکرمہ پہنچ گئے۔

تفصیلات کے مطابق نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ کی مساجد میں دہشت گردی کا شکار ہونے والے مسلمانوں کی بڑی تعداد خادم الحرمین الشریفین شاہ سلمان بن عبدالعزیز کے جانب سے خصوصی حج پروگرام کے تحت فریضہ حج کی ادائیگی کے لیے مکہ مکرمہ پہنچ گئی ہے۔

نیوزی لینڈ سے آنے والے عازمین حج کے قریبی عزیز 15 مارچ 2019ءکو کرائسٹ چرچ کی مساجد میں ہونے والے دہشت گردانہ حملے میں شہید ہو گئے تھے۔

عرب ٹی وی کے مطابق وزارت حج کے سیکرٹری حج وعمرہ ڈاکٹر عبداللہ الصامل نے ایک بیان میں کہا ہے کہ دہشت گردی کے شہداءکے لواحقین کو حکومت کی میزبانی میں حج کی ادائیگی کا موقع فراہم کرنا ان کے دکھ کو شیئر کرنے کی کوشش ہے، اس کوشش کے نتیجے میں متاثرین کواپنا غم دور کرنے کا موقع ملتا ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ سعودی عرب پہنچنے والے نیوزی لینڈ کے مسلمانوں کا استقبال کیا گیا، نیوزی لینڈ میں دہشت گردی کے متاثرین کا سرکاری حج پر یہ پہلا قافلہ ہے۔ مزید متاثرین بھی اس قافلے میں جلد شامل ہو جائیں گے۔

سعودی عرب میں متعین نیوزی لینڈ کے سفیر جیمز مونرو نے اپنے ملک سے آنے والے عازمین حج کا استقبال کیا اور سعودی حکومت کی طرف سے متاثرین کے ساتھ اظہار یکجہتی کی کوششوں پر ریاض کا شکریہ ادا کیا۔

مزید پڑھیں : سانحہ کرائسٹ چرچ کے متاثرین شاہی پروٹوکول میں حج کریں گے، سعودی عرب

یاد رہے سعودی فرمانروا شاہ سلمان بن عبدالعزیز نے سانحہ کرائسٹ چرچ میں مرنے والوں کے 200 رشتے داروں اور زخمیوں کو اپنے خرچ پر حج کرانے کا اعلان کیا تھا۔

نیوزی لینڈ کے شہر سانحہ کرائسٹ چرچ سے جڑے عازمین کو شاہی مہمان بنایا جائے گا اور اُن کے تمام بشمول سفری اخراجات بھی سعودی عرب کی حکومت ادا کرے گی۔

واضح رہے رواں سال مارچ میں نیوزی لینڈ کے شہر کرائسٹ چرچ کی دو مساجد پر نماز جمعہ کی ادائیگی کے لیے آنے والے افراد کو مسلح شخص نے گولیوں کا نشانہ بنایا جس کے نتیجے میں 51 ہلاک اور 20 زخمی ہوئے تھے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں