The news is by your side.

Advertisement

کراچی اور حیدر آباد میں چپ تعزیئے کا جلوس برآمد، سخت سیکیورٹی انتظامات

کراچی : چپ تعزیے کامرکزی جلوس کراچی میں نشتر پارک سے برآمد ہو کر روایتی راستوں سے ہوتا ہوا امام بارگاہ حسینیہ ایرانیاں کھارادر پہنچ کر اختتام پذیر ہوگیا۔ جبکہ حیدرآباد میں چپ تعزیے کا مرکزی جلوس قدم گاہ مولیٰ علی سے برآمد ہوکر امام بارگاہ کربلا دادن شاہ پہنچ کر اختتام پذیر ہوا۔

تفصیلات کے مطابق کراچی میں آٹھ ربیع الاول پر حضرت امام حسن عسکری کے یوم شہادت کی مناسبت سے مجلس کا انعقاد نشتر پارک میں کیا گیا۔مجلس سے خطاب کرتے ہوئے علامہ علی کرار نقوی نے اسلام کی تعلیمات اورفلسفہ شہادت پر روشنی ڈالی اور مصائب امام حسن عسکری بیان کئے۔

بعد ازاں چپ تعزیہ کا مرکزی جلوس نشتر پارک سے برآمد ہوا جو ایم اے جناح روڈسے صدر ، ایمپریس مارکیٹ اور پھر دوبارہ ایم اے جناح روڈ پراپنے روایتی راستوں سے ہوتا ہوا، حسینیان ایرانیاں کھارادار پر پہنچا ۔ اس موقع پر سکیورٹی کے بھی خصوصی انتظامات کئے گئے تھے۔

جلوس کی سیکیورٹی کے لئے 15 سوپولیس اہلکار تعینات تھے جبکہ رینجرز اہلکار بھی سیکیورٹی پر تعینات تھے۔ جلوس سے قبل بم ڈسپوزل اسکواڈ نے جلوس کی گزرگاہوں کو کلیئر قرار دیا۔ اس موقع پر ایم اے جناح روڈ کو ٹریفک کے لیے بند کردیا گیا تھا۔

علاوہ ازیں حیدرآباد میں چپ تعزیے کا مرکزی جلوس قدم گاہ مولیٰ علی سے برآمد ہوکر امام بارگاہ کربلا دادن شاہ پہنچ کر اختتام پذیر ہوگیا۔

حیدرآباد میں انجمن حیدری کے زیر اہتمام چپ تعزیے کا مرکزی جلوس قدم گاہ مولیٰ علی سے انتہائی سخت سیکیورٹی میں برآمد ہوا، جلوس میں 50سے زائد انجمنوں کے ہزاروں عزادار شریک تھے، جلوس میں ذوالجناح، علم پاک اور مختلف زیارتیں شامل تھیں۔

جلوس کے شرکاء اسٹیشن روڈ، صدر ، بوہری بازار اور سینٹ میری چوک سے ہوتے ہوئے امام بارگاہ کربلا دادن شاہ پہنچے جہاں جلوس اختتام پذیر ہوگیا، جلوس کے موقع پر سیکیورٹی کے انتہائی سخت انتظامات کئے گئے تھے جس کے تحت جلوس کے ہمراہ اور گزرگاہ پر بڑی تعداد میں پولیس اور رینجرز کے اہلکار وں کو تعینات کیا گیا تھا۔

Print Friendly, PDF & Email

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں