The news is by your side.

Advertisement

خیبر پختون خوا میں ٹور ازم پولیس کے قیام کا فیصلہ

پشاور: وزیرِ اعلیٰ خیبر پختون خوا محمود خان کی زیرِ صدارت صوبے میں سیاحت کے فروغ پر اجلاس میں ٹور ازم پولیس کے قیام کا فیصلہ کیا گیا ہے۔

تفصیلات کے مطابق صوبائی کابینہ نے صوبے بھر میں بہ شمول ضم شدہ اضلاع میں سیاحت کے فروغ کے لیے قانونی مسودے کی فوری تیاری کا حکم دے دیا۔

سوات موٹر وے کی توسیع بھی موجودہ حکومت کے ایجنڈے میں شامل ہے۔

وزیرِ اعلیٰ کے پی

اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ سیاحتی مقامات پر تمام تعمیرات بلڈنگ کوڈ کے مطابق کی جائیں، سیاحت کا بہ طور صنعت مگر ماحول دوست فروغ حتمی ہدف ہے۔

کے پی حکومت نے فیصلہ کیا کہ صوبے میں ٹور ازم پولیس قائم کی جائے گی، جس میں نوجوان رضا کاروں کو شامل کیا جائے گا، فیصلہ کیا گیا کہ ٹور ازم پولیس کے لیے بین الاقوامی سطح پر بہترین ماڈل اپنایا جائے گا۔

اجلاس میں فیصلہ کیا گیا کہ سیاحت کے فروغ کے لیے قانون سازی محکمہ جنگلات اور ٹور ازم سمیت تمام اسٹیک ہولڈرز کی مشاورت اور اتفاق رائے سے کی جائے گی، نیز مزید سیاحتی مقامات کی نشان دہی اور زمین کے حصول کے لیے بھی اقدامات کیے جائیں گے۔

یہ بھی پڑھیں:  کے پی حکومت نے شندور پولو فیسٹیول کی تیاریاں شروع کردیں

وزیرِ اعلیٰ محمود خان نے اجلاس کی صدارت کرتے ہوئے موجودہ سڑکوں کی تعمیرِ نو اور جیپ ایبل ٹریکس کی بحالی کی ہدایت کی۔

اجلاس میں اس امر پر بھی اتفاق کیا گیا کہ سیاحتی کشش رکھنے والے ایریگیشن ڈیمز کی سائیڈز کو سیاسی خطوط پر ترقی دی جائے گی اور سیاحوں کے لیے آسان رجسٹریشن متعارف کرائی جائے گی۔

وزیرِ اعلیٰ محمود خان نے ’خپل کور ولیج‘ نامی شیلٹر ہوم کا سوات میں سنگِ بنیاد رکھا۔

یاد رہے کہ سوات موٹر وے کی توسیع بھی موجودہ حکومت کے ایجنڈے میں شامل ہے، سوات میں موجود تمام سیاحتی مقامات تک رسائی آسان بنانے کے لیے تیزی سے اقدامات کیے جا رہے ہیں۔

گزشتہ روز وزیرِ اعلیٰ محمود خان نے ’خپل کور ولیج‘ نامی شیلٹر ہوم کا سوات میں سنگِ بنیاد رکھا، جسے پہلے ہی 5 کروڑ روپے فراہم کیے جا چکے ہیں، وزیرِ اعلی نے خپل کور کے لیے مزید 50 لاکھ انڈومنٹ فنڈ کا اعلان کیا۔

محمود خان کا کہنا تھا کہ پہلے کبھی بھی غریب عوام کے لیے شیلٹر ہوم نہیں بنے، پشاور جیسے شیلٹر ہوم صوبے کے تمام ڈویژنل ہیڈ کواٹرز میں بنائے جائیں گے، خپل کور میں تعلیم، صحت، کھیل کود اور دیگر سہولیات موجود ہیں۔

انھوں نے کہا کہ بہت جلد سیدو اسپتال کا افتتاح بھی کر دیا جائے گا، جس کے لیے درکار ورکنگ فورس کی منظوری دی جا چکی ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں