نقل روکنے کے لیے وزیر اعلیٰ سندھ کے امتحانی مراکز کے دورے -
The news is by your side.

Advertisement

نقل روکنے کے لیے وزیر اعلیٰ سندھ کے امتحانی مراکز کے دورے

کراچی: سندھ میں جاری انٹر میڈیٹ کے امتحانات میں جب نقل کسی طرح نہ رک سکی تو وزیر اعلیٰ سندھ خود میدان میں اتر آئے۔ وزیر اعلیٰ نے امتحانی مراکز کے دورے کیے اور امتحانی نگرانوں پر برہمی کا اظہار کیا۔

تفصیلات کے مطابق کراچی میں انٹر میڈیٹ کے امتحانات میں نقل روکنے کے احکامات پر جب عمل درآمد نہ ہوا تو وزیر اعلیٰ سندھ نے خود امتحانی مراکز کے دوروں کا فیصلہ کرلیا۔

آج صبح وزیر اعلیٰ مراد علی شاہ اچانک امتحانی مراکز کے دورے کے لیے نکل گئے۔

وزیر اعلیٰ نے اسلامیہ کالج اورعائشہ باوانی کالج میں قائم امتحانی مراکز کا دورہ کیا۔ اس دوران وہ کلاس رومز میں بھی گئے اور بچوں سے بات چیت کی۔

وزیر اعلیٰ ایک کلاس میں پنکھا نہ چلنے پر سخت برہم ہوگئے۔

مزید پڑھیں: انٹر کے امتحانات میں نقل، بھارتی موبائل فونز کے استعمال کا انکشاف

امتحانی نگرانوں اور اسسٹنٹ کمشنر کے موبائل فونز ساتھ لانے پر وزیر اعلیٰ نے برہمی کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ آپ یہاں کام کرنے آتے ہیں یا فون پر بات کرنے؟ وزیر اعلیٰ نے ممتحن کا فون پرنسپل آفس میں رکھوا دیا۔

اسلامیہ کالج کے باہر میڈیا نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے وزیر اعلیٰ نے کہا کہ بچوں کے مستقبل کے لیے سخت اقدامات اٹھا رہے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ بچوں کے مستقبل سے کھیلنے والوں کے خلاف سخت کارروائی کی جائے گی۔

وزیر اعلیٰ کے دورے کے دوران کمشنر کراچی، سیکریٹری بورڈ کے علاوہ محکمہ تعلیم کے اعلیٰ حکام بھی ان کے ہمراہ تھے۔

نقل کروانے والے گرفتار

وزیر اعلیٰ سندھ کی جانب سے محکمہ انسداد دہشت گردی کو نقل میں ملوث ملزمان کی گرفتاری کا ٹاسک دیے جانے کے بعد سی ٹی ڈی نے مختلف کارروائیاں کیں۔

سی ٹی ڈی نے کراچی اور حیدر آباد کے مختلف علاقوں میں کارروائیاں کر کے متعدد ملزمان گرفتار کر لیے۔ گرفتار ملزمان میں طلبا سمیت دیگر افراد شامل ہیں۔

ملزمان کے قبضے سے ڈیوائسز اور موبائل فونز برآمد کیے گئے۔ پرچے آؤٹ کرنے میں ملوث 2 مرکزی ملزمان بیرون ملک فرار ہوگئے۔

ذرائع کے مطابق پرچے انٹر بورڈ سے امتحانی مراکز تک ترسیل کیے جانے کے دوران آؤٹ ہوتے تھے۔ شہر میں ایسے 15 سے 20 امتحانی مراکز ہیں جہاں سے پرچے آؤٹ ہوتے ہیں۔

تفتیش میں پیشرفت پر ایڈیشنل آئی جی نے سی ٹی ڈی کا اجلاس طلب کرلیا۔


اگر آپ کو یہ خبر پسند نہیں آئی تو برائے مہربانی نیچے کمنٹس میں اپنی رائے کا اظہار کریں اور اگر آپ کو یہ مضمون پسند آیا ہے تو اسے اپنی فیس بک وال پر شیئر کریں۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں