The news is by your side.

Advertisement

کالج لیکچرار کی خود کشی کا ذمہ دار کون ؟ اے آر وائی تفصیلات سامنے لے آیا

لاہور: کالج لیکچرار نے اپنی بے گناہی کے ثبوت کے باوجود تصدیقی لیٹر جاری نہ ہونے پر خود کشی کی، انکوائری افسر نے رپورٹ میں لیکچرار افضل کو الزامات سے بری قرار دیا تھا۔

تفصیلات کے مطابق ایم اے او کالج کے انگلش ڈیپارٹمنٹ کے لیکچرار افضل محمود کی خود کشی کے معاملہ پر قائم کی گئی کالج ہراسمنٹ کمیٹی نے لیکچرار افضل کو بے قصور قرار دیا تھا تاہم انکوائری رپورٹ کے باوجود پرنسپل کی جانب سے لیکچرار کی بےگناہی کا باظابطہ اعلان نہیں کیا گیا۔

انگریزی کے پروفیسر افضل کو بے قصور ہونے کے باوجود انتظامیہ نے تین ماہ تک کلیئرنس لیٹر نہ دیا، افضل نے تھک ہار کر خودکشی کرلی۔

ایم اے او کالج کے انگلش ڈیپارٹمنٹ کے لیکچرار کی خودکشی کے بعد کالج انتظامیہ اور پرنسپل کی نااہلی پرسوالات اٹھ گئے، لیکچرار افضل محمود نے ایک طالبہ کی جانب سے ہراساں کرنے کے الزام اور تحقیقات کے بعد اس کے غلط ثابت ہونے کے باوجود انتظامیہ کی جانب سے تصدیقی خط جاری نہ کرنے پر خودکشی کرلی تھی۔

لیکچرار کی خود کشی کا ذمہ دار کون ہے؟ اےآر وائی نیوز تفصیلات منظر عام پر لے آیا، ذرائع کے مطابق لیکچرار پر لگے الزامات کی انکوائری کیلئے کالج ہراسمنٹ کمیٹی قائم کی گئی، کمیٹی کی انکوائری افسر ڈاکٹر عالیہ نے اپنی رپورٹ میں لیکچرار افضل کو الزامات سے بری قراردے دیا تھا۔

انکوائری افسرڈاکٹر عالیہ کا کہنا ہے کہ مذکورہ رپورٹ تین ماہ پہلے ہی پرنسپل ڈاکٹر فرحان کو جمع کرادی گئی تھی اور رپورٹ میں پرنسپل کو طالبہ کیخلاف کارروائی کرنے کا بھی کہا گیا تھا۔

واضح رہے کہ لیکچرار افضل کی خودکشی نے کالج انتظامیہ اور پرنسپل کی نااہلی پرسوالات اٹھادیئے ہیں۔ سوال پیدا ہوتا ہے کہ انکوائری رپورٹ کے باوجود لیکچرار کو کیوں بے قصور نہیں ٹھہرایا گیاْ، انکوائری رپورٹ کے باوجود پرنسپل نے طالبہ کیخلاف ایکشن کیوں نہیں لیا؟

یاد رہے کہ ایم اے او کالج میں انگریزی کے استاد افضل محمود نے نو اکتوبر کو زہر کھا کر خودکشی کر لی تھی، افضل محمود کی لاش کے ساتھ ان کی اپنی تحریر میں ایک نوٹ موجود تھا۔

جس پر تحریر تھا کہ وہ اپنا معاملہ اب اللہ کے سپرد کر رہے ہیں اور ان کی موت کے بارے میں کسی کی نہ تفتیش کریں اور نہ ہی زحمت دیں، پولیس اور میڈیکل رپورٹ سے ان کی خودکشی اور نوٹ لکھنے کی تصدیق ہو چکی ہے۔

Comments

comments

یہ بھی پڑھیں